NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Pardes may zainab kho

Reciter: Alamdar Razvi


pardes may zainab kho baithi
athara baras ke paale ko
rote hai khade sab aale nabi
athara baras ke paale ko

armaan na nikla bano ka
hai laash pe nauha bano ka
paayegi kahan ye kokh jali
athara baras ke paale ko

naazon se muradon se paala
shadi ka zamana jab aaya
maidan may khokar baith gayi
athara baras ke paale ko

dil thaam ke akbar ki maadar
sarwar se ye kehti thi rokar
kho aaye kahan ay ibne ali
athara baras ke paale ko

qismat ka karun kis'se mai gila
khidmat ke ewaz kuch bhi na mila
sehra bhi na zainab baandh saki
athara baras ke paale ko

پردیس میں زینب کھو بیٹھی
اٹھارہ برس کے پالے کو
روتے ہیں کھڑے سب آل نبی
اٹھارہ برس کے پالے کو

ارمان نہ نکلا بانو کا
ہے لاش پہ نوحہ بانو کا
پاے گی کہاں یہ کوک جلی
اٹھارہ برس کے پالے کو

نازوں سے مرادوں سے پالا
شادی کا زمانہ جب آیا
میدان میں کھو کر بیٹھ گیء
اٹھارہ برس کے پالے کو

دل تھام کے اکبر کی مادر
سرور سے یہ کہتی تھی روکر
کھو آے کہاں اے ابن علی
اٹھارہ برس کے پالے کو

قسمت کا کروں میں کس سے گلہ
قدمت کے عوض کچھ بھی نہ ملا
سہرا بھی نہ زینب باندھ سکی
اٹھارہ برس کے پالے کو