NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Maa kehti thi uth jaag

Reciter: Qamar Abbas
Shayar: Akhtar Zaidi


maa kehti thi uth jaag meri jaan sakina
uth ghar ko chale khul gaya zindan sakina

bunde jo tere shimr ne cheene wo diladun
ek nanhi si chadar mai tere sar pe udhadun
ghar jaane ka ab hogaya saaman sakina
maa kehti thi uth jaag...

masoom se gaalon pe tamache bhi hai khaaye
ro ro ke kaha karti thi baba nahi aaye
rota hai tere haal pe zindan sakina
maa kehti thi uth jaag...

uth'ti hi nahi laakh uthaya hai kayi baar
lo mar hi gayi aaj wo baba ki azadaar
lab khol zara maa hai pareshan sakina
maa kehti thi uth jaag...

armaan bahot tumko tha ghar jaane ka beti
hum choot gaye qaid se uth ghar chale beti
poora na hua ye tera armaan sakina
maa kehti thi uth jaag...

ek baar mere seene se lag ja zara uth kar
kehti thi ye maa qabre sakina se lipat kar
kuch dayr ke hai hum tere mehman sakina
maa kehti thi uth jaag...

waaris na raha mera raha na mera asghar
jaati hoo sakina tumhe zindan may kho kar
ujda hai mera kaisa gulistan sakina
maa kehti thi uth jaag...

mayyat pe sakina ki haram nauha kuna thay
chehre pe sakina ke tamachon ke nishan thay
lo mar hi gayi shaam ki mehman sakina
maa kehti thi uth jaag...

rone ki sada aati hai zindan se aksar
mar ke bhi rehaai na mili hai jise akhtar
sunsaan sa hai aaj kyun zindan sakina
maa kehti thi uth jaag...

ماں کہتی تھی اٹھ جاگ میری جان سکینہ
اٹھ گھر کو چلے کھل گیا زندان سکینہ

بندیں جو تیرے شمر نے چھینے وہ دلادوں
اک ننھی سی چادر میں تیرے سر پہ اڑھادوں
گھر جانے کا اب ہوگیا سامان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

معصوم سے گالوں پہ طمانچے بھی ہیں کھاے
رورو کے کہا کرتی تھی بابا نہیں آے
روتا ہے تیرے حال پہ زندان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

اٹھتی ہی نہیں لاکھ اٹھایا ہے کیء بار
لو مر ہی گئی آج وہ بابا کی عزادار
لب کھول زرا ماں ہے پریشان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

ارمان بہت تم کو تھا گھر جانے کا بیٹی
ہم چھوٹ گئے قید سے اٹھ گھر چلیں بیٹی
پورا نہ ہوا یہ تیرا ارمان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

اک بار میرے سینے سے لگ جا زرا اٹھ کر
کہتی تھی یہ ماں قبر سکینہ سے لپٹ کر
کچھ دیر کہ ہیں ہم تیرے مہمان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

وارث نہ رہا میرا رہا نہ میرا اصغر
جاتی ہوں سکینہ تمہیں زندان میں کھو کر
اجڑا ہے میرا کیسا گلستان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

میت پہ سکینہ کی حرم نوحہ کناں تھے
چہرے پہ سکینہ کے طمانچوں کے نشاں تھے
لو مر ہی گئی شام کی مہمان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔

رونے کی صدا آتی ہے زندان سے آکر
مر کے بھی رہای نہ ملی ہے جسے اختر
سنسان سا ہے آج کیوں زندان سکینہ
ماں کہتی تھی اٹھ جاگ۔۔۔