NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ab sakina may dam

Reciter: Mir Azhar Ali
Shayar: Hilmi Afandi


ab sakina may dam kahan amma
ab to khulwao reesma amma

kam ye zindan nahi hai turbat se
maut behtar hai aisi dehshat se
dam ghuta ja raha hai wehshat se
shamma bhi to nahi hai kismat se
kaisa tareek hai makan amma

kaan zakhmi kiye liye lo lo
aur phir is pa hukm hai ke na ro
ye ghazab bhi ajeeb hai dekho
mai jo roti hoo apne baba ko
shimr deta hai ghurkiyan amma

log dete hai kya yuhin pursa
dono ruqsaar mere dekhiyega
dega kitni yateem ko eeza
pooche shimr se bara e khuda
kitne khaun mai seliyan amma

kisme haalat hai maar khane ki
koi surat karo bachane ki
kya mai khaabil hoo taziyane ki
shimr ki phir khabar hai aane ki
ruk rahi hai meri zuban amma

kis khadar hai shaki ke dil may kad
maarta hai jo dam ba dam murtad
ho chuki ho chuki sitam ki had
mere marne ke baad hi shayad
shimr kholega reesma amma

wa hussaina ka haye wo naala
haye sone mujhe nahi deta
qaid khane ke paas hi hai goya
suboh tak naam leke baba ka
aake roti hai dadi jaan amma

chaahne waale hi na ho jiske
qaid khane may kyun na wo roye
wo juda humse hum juda unse
karbala me hai karbala waale
kya kare reh ke hum yahan amma

baba le jane aagaye lijiye
mujhko ab khibla roo litadije
itni takleef aur bhi kijiye
padne yaseen unse kehdije
ghash se uthe jo bhai jaan amma

li jo bachi ne maut ki hichki
ya ali kehke ghash huwi maa bhi
aake sab jamma hogaye qaidi
kehke nadaan ye mar gayi hilmi
ab to khulwao reesma amma

اب سکینہ میں دم کہاں اماں
اب تو کھلواوء ریسماں اماں

کم یہ زنداں نہیں ہے تربت سے
موت بہتر ہے ایسی دہشت سے
دم گھٹا جا رہا ہے وحشت سے
شمع بھی تو نہیں ہے قسمت سے
کیسا تاریک ہے مکاں اماں

کان زخمی کیے لیے لو لو
اور پھر اس پہ ظلم ہے کہ نہ رو
یہ غضب بھی عجیب ہے دیکھو
میں جو روتی ہوں اپنے بابا کو
شمر دیتا ہے گھرکیاں اماں

لوگ دیتے ہیں کیا یونہی پرسہ
دونوں رخسار میرے دیکھیےء گا
دیگا کتنی یتیم کو ایذا
پوچھیےء شمر سے براے خدا
کتنے کھاؤں میں سیلیاں اماں

کس میں حالت ہے مار کھانے کی
کوئی صورت کرو بچانے کی
کیا میں قابل ہوں تازیانے کی
شمر کی پھر خبر ہے آنے کی
رک رہی ہے میری زباں اماں

کس قدر ہے شقی کے دل میں کد
مارتا ہے جو دم بہ دم مرتد
ہو چکی ہو چکی ستم کی حد
میرے مرنے کے بعد ہی شاید
شمر کھولے گا ریسماں اماں

وا حسینا کا ہاے وہ نالہ
ہاے سونے مجھے نہیں دیتا
قید خانے کے پاس ہی گویا
صبح تک نام لے کے بابا کا
آکے روتی ہے دادی جاں اماں

چاہنے والے ہی نہ ہو جس کے
قید خانے میں کیوں نہ وہ روے
وہ جدا ہم سے ہم جدا ان سے
کربلا میں ہیں کربلا والے
کیا کریں رہ کے ہم یہاں اماں

بابا لے جانے آگےء لیجئے
مجھکو اب قبلہ رو لٹا دیجیےء
اتنی تکلیف اور بھی کیجئے
پڑھنے یاسین ان سے کہہ دیجئے
غش میں اٹھے جو بھای جاں اماں

لی جو بچی نے موت کی ہچکی
یا علی کہکے غش ہوی ماں بھی
آکے سب جمع ہوگئے قیدی
کہکے نادان مرگیء حلمی
اب تو کھلواوء ریسماں اماں