اے مومنوں جب مجلس شببر میں آنا
بچوں کا تمہیں واسطہ یہ بھول نہ جانا
یہ سوچ کے جی کھول کے تم اشک بہانا
مجلس جہاں ہوگی وہاں آتیں ہیں سکینہ

پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ
پیاسی ہیں سکینہ ہاے پیاسی ہیں سکینہ

الله کرے آے کبھی ایسا زمانہ
ہو شام کے زندان کی طرف آپ کا جانا
پھٹ جاییگا دل دیکھ کے وہ غم کا ٹھکانہ
بے حال ہوئی قبر میں سوتی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

یوں جانب دریا گئے عبّاس دلاور
اور دریا سے مشکیزہ بھرا بادل مضطر
دریا کی ہر اک موج یہ کہتی تھی تڑپ کر
ہے تیسرا دن ہاے تڑپتی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

شام آگئی جب چھانے لگا بن میں اندھیرا
زینب نے کیا بھائی کے لاشے پہ یہ نوحہ
کیا تم نے سکینہ کو کہیں دیکھا ہے بھیا
اک کوزہ لئے دشت میں آی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

جب گیارہ محرم کو سوے شام سدھاری
دریا کی طرف دیکھ کے زینب یہ پکاری
عبّاس نہ مرجاے بھتیجی یہ تمہاری
بے حال میری گود میں بیٹھی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

اس طرح ستم ڈھاتے ہیں اب ظلم کے بانی
لاکر یہ بھرے کوزے بہا دیتے ہیں پانی
کچھ اور بھی بڑھ جاتی ہے یوں تشنہ دہانی
بھائی کی طرف دیکھ کے روتی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

آنسو ابھی بچی کے نہیں پار تھے تھمنے
پھر مار دیا درّا کسی اہل ستم نے
سجاد کو ہر گام رلایا اسی غم نے
اس عمر میں یہ سختیاں سہتی ہیں سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

یہ ظلم بھی کمسن پے ستمگاروں نے ڈھایا
رکھا ہے اسے قید وہاں یکا و تنہا
رہتا ہے جہاں دن میں قیامت کا اندھیرا
ڈر ڈر کے نہ مر جائے اکیلی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ

کہتا ہے سنو ہاتھوں کو جوڑے ہوے گوھر
آج ایسے بہے آنکھوں سے اشکوں کا سمندر
یہ کہتی ہوئی جائے نہ شببر کی دختر
لیب خشک زباں سوکھی ہے روتی ہے سکینہ
پانی نہ ملا آج بھی پیاسی ہیں سکینہ


ay momino jab majlise shabbir may aana
bachon ka tumhe waasta ye bhoolna jaana
ye soch ke jee khol ke tum ashq bahana
majlis jahan hogi wahan aati hai sakina

paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina
pyasi hai sakina haaye pyasi hai sakina

allah kare aaye kabhi aisa zamana
ho shaam ke zindaan ki taraf aap ka jaana
phat jaayega dil dekh ke wo gham ka thikana
behaal hui qabr may soti hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

yun jaanibe darya gaye abbase dilawar
aur darya se mashqiza bhara ba-dile muztar
darya ki har ek mauj ye kehti thi tadapkar
hai teesra din haaye tadapti hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

shaam aagayi jab chaane laga ban may andhera
zainab ne kiya bhai ke laashe pe ye nouha
kya tum ne sakina ko kaheen dekha hai bhaiya
ek kooza liye dasht may aayi hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

jab gyara moharam ko suye shaam sidhari
darya ki taraf dekh ke zainab ye pukari
abbas na marjaye bhatiji ye tumhari
behaal meri godh may baithi hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

is tarha sitam dhaate hai ab zulm ke baani
laakar ye bhare kooze baha dete hai paani
kuch aur bhi bad jaati hai yun tashnadahani
bhaai ki taraf dekh ke roti hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

aansu abhi bachi ke nahi paar thay thamne
phir maar diya durra kisi ehle sitam ne
sajjad ko har gaam rulaaya isi gham ne
is umr may ye sakhtiyaan sehti hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

durro ki azziyat se tadapti hai hazeena
dukhta hai badan siskiyan leti hai sakina
sone ke liye paas nahi baba ka seena
ek kone may sehmi hui baithi hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

ye zulm bhi kamsin pe sitamgaaro ne dhaaya
rakha hai isay qaid wahan par yako tanha
rehta hai jahan din may qayamat ka andhera
darr darr ke na mar jaaye akeli hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina

kehta hai suno haaton ko jode huwe gowhar
aaj aise bahe aankhon se ashkon ka samandar
ye kehti huwi jaaye na shabbir ki dukhtar
lab khushk zaban sookhi hai roti hai sakina
paani na mila aaj bhi pyasi hai sakina
Salaam - Pyasi Hai Sakina
Shayar: Gowhar
Reciter: Nasir Zaidi
Download mp3
Listen Online