NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Dua karna ali akbar

Nohakhan: Shahid Baltistani
Shayar: Mir Takallum


dua karna ali akbar
safar may maa guzar jaye
kabhi bazaar na aaye
mohamed ki nawasi par
koi pathar na barsaye
dua karna ali akbar

teri phupiyon ke badle may
mujhe sab maar le pathar
ruqayya zainab o kulsoom
ki ban jaun mai chadar
ali ki betiyon ko maa
bacha kar shaam se laaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

tamache maar kar zaalim
badi nafrat se hasta hai
tumhare baap ka badla
sakina se wo leta hai
behan baba ke qaatil se
tamache aur na khaaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

dua karta hai marne ki
lahoo aankhon se jaari hai
wohi akbar hai ab mera
wohi ab mera ghazi hai
tere bemaar bhai ko
meri bhi umr lag jaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

kaleje par ali akbar
lagegi phir tere barchi
wahan jaana hai be-parda
jahan shaahi thi zainab ki
khule sar binte zehra ko
koi pehchaan na paaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

tere seene se jo nikla
mere dil may hai wo naiza
meri saansein to chalti hai
magar mai ab nahi zinda
zaeefa maa ko bete ki
khuda mayyat na dikhlaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

agar mastoor mar jaye
andhera hone dete hai
tere ghar ki riwayat hai
janaze shab may uth'te hai
haram jab be-rida guzre
andhera saamne chaaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

shaheedon ki dua'on ko
khuda bhi rad nahi karta
takallum maa ye kehti thi
bulaale paas ay beta
mahe shaban ka mujhko
nazar ab chand na aaye
dua karna ali akbar
safar may maa guzar...

دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر جاے
کبھی بازار نہ آئے
محمد کی نواسی پر
کوئی پتھر نہ برساتے
دعا کرنا علی اکبر

تیری پھپھیوں کے بدلے میں
مجھے سب مارلے پتھر
رقیہ زینب و کلثوم
کی بن جاؤں میں چادر
علی کی بیٹیوں کو ماں
بچا کر شام سے لاے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

طمانچے مار کر ظالم
بڑی نفرت سے ہنستا ہے
تمہارے باپ کا بدلہ
سکینہ سے وہ لیتا ہے
بہن بابا کے قاتل سے
طمانچے اور نہ کھاے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

دعا کرتا ہے مرنے کی
لہو آنکھوں سے جاری ہے
وہی اکبر ہے اب میرا
وہی اب میرا غازی ہے
تیرے بیمار بھائی کو
میری بھی عمر لگ جائے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

کلیجے پر علی اکبر
لگے گی پھر تیرے برچی
وہاں جانا ہے بے پردہ
جہاں شاہی تھی زینب کی
کھلے سر بنت زہرا کو
کوئی پہچان نہ پائے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

تیرے سینے سے جو نکلا
میرے دل میں ہے وہ نیزہ
میری سانسیں تو چلتی ہیں
مگر میں اب نہیں زندہ
ضعیفہ ماں کو بیٹے کی
خدا میت نہ دکھلاے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

اگر مستور مر جاے
اندھیرا ہونے دیتے ہیں
تیرے گھر کی روایت ہے
جنازے شب میں اٹھتے ہیں
حرم جب بے ردا گزرے
اندھیرا سامنے چھاے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔

شہیدوں کی دعاؤں کو
خدا بھی رد نہیں کرتا
تکلم ماں یہ کہتی تھی
بلالے پاس اے بیٹا
ماہ شعبان کا مجھکو
نظر اب چاند نہ آے
دعا کرنا علی اکبر
سفر میں ماں گزر۔۔۔