NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bas raaj karegi

Nohakhan: Shahid Baltistani
Shayar: Mir Takallum


ghaibat ka parda uthne do
jo dekh rahe hai hum logon
tum bhi dekhoge yaad rakho

zulm phir zulm hai khoon phir khoon hai
zulm phir zulm hai badta hai to mit jaata hai
khoon phir khoon hai tapkega to jam jayega
khaak e sehra pe jamay ya kafe qaatil pe jame
farq e insaaf pe jamay ya paaye salaasil pe jame
tere bedaat pe ya laasha e bismil pe jame
khoon phir khoon hai tapkega to jam jayega

jo roze ajal tay paaya tha
saabit hua roze ashoora
yeh kal bhi hamara daawa tha
yeh aaj bhi hai apna hai dawa
zillat hai muqaddar baatil ka
bas raaj karegi karbobala
daur ho chahe koi bhi hai khuda ka faisla
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

karbala ka raaj hi deene khuda ka raaj hai
khanjaro ki maut hai ye khoon ki meraaj hai
nauke naiza par ali ke laal ne saabit kiya
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

khoon behkar bhi amar hai zulm ko maut aagayi
gir gaya darbar e baatil karbala hai aaj bhi
ab bhi ye lehra ke kehta hai alam abbas ka
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

zulm ki baat hi kya zulm ki auqaat hi kya
zulm phir zulm hai aghaaz se anjam talak
zulm ki qismat-e-nakara aur ruswa se kaho
jabr ki hikmat-e-purkaar ki emaan se kaho
khoon deewana hai daaman pe lapak sakta hai
khoon phir khoon hai tapkega to jam jaayega

zulm ki sheh-rag jo kaate khoon wo shamsheer hai
jabr ko qaidi jo karle khoon wo zanjeer hai
khoon ke aansu baha kar di ye abid ne sada
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

shaam ke darbar may hai binte zehra berida
ye wo manzil hai jahan par sabr khud rone laga
baap ke lehje may khutba deke zainab ne kaha
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

ho kisi qaatil ka khanjar ya ho damane zameen
khoon ki surkhi takallum chup nahi sakti kahin
har gali may hai ye naara aaj bhi darwesh ka
bas raaj karegi karbobala
zillat hai muqaddar...
bas raaj karegi...

tumne jis khoon ko maqtal may dabana chaha
aaj wo koocha-o-bazaar may aa nikla hai
kahin shola kahin naara kahin pathar ban kar
aise sholay ke bhujao to bhujaye na bane
aise naare ke dabao to dabaye na dabe
labbaik ya hussain

غیبت کا پردہ اٹھنے دو
جو دیکھ رہے ہیں ہم لوگوں
تم بھی دیکھوگے یاد رکھو

ظلم پھر ظلم ہے خون پھر خون ہے
ظلم پھر ظلم ہے بڑھتا ہے تو پھر مٹ جاتا ہے
خون پھر خون ہے ٹپکے گا تو جم جاے گا
خاک صحرا پہ جمیں یا کافے قاتل پہ جمیں
فرق انصاف پہ جمے یا پاے سلاسل پہ جمے
خون پھر خون ہے ٹپکے گا تو جم جاے گا
خون پھر خون ہے ٹپکے گا تو جم جاے گا

جو روز اجل طے پایا تھا
ثابت ہوا روز عاشورا
یہ کل بھی ہمارا دعوہ تھا
یہ آج بھی ہے اپنا ہے دعویٰ
ذلت ہے مقدر باطل کا
بس راج کرے گی کربوبلا
دور ہو چاہے کوئی بھی ہے خدا کا فیصلہ
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

کربل کا راج ہی دین خدا کا راج ہے
خنجروں کی موت ہے یہ خون کی معراج ہے
نوکِ نیزہ پر علی کے لال نے ثابت کیا
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

خون بہہ کر بھی امر ہے ظلم کو موت آ گیء
گر گیا دربار باطل کربلا ہے آج بھی
اب بھی یہ لہرا کے کہتا ھے الم عباس کا
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

ظلم کی بات ہی کیا ظلم کی اوقات ہی کیا
ظلم پھر ظلم ہے آغاز سے انجام تلک
ظلم کی قسمت ناکارہ اور رسوا سے کہو
جبر کی حکمت پکار کی ایماں سے کہو
خون دیوانہ ہے دامن پہ لپک سکتا ہے
خون پھر خون ہے ٹپکے گا تو جم جاے گا

ظلم کی شہ رگ جو کاٹے خون وہ شمشیر ہے
جبر کو قیدی جو کرلے خون وہ زنجیر ہے
خون کے آنسوں بہا کر دی یہ عابد نے صدا
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

شام کے دربار میں ہے بنت زہرا بے ردا
یہ وہ منزل ہے جہاں پر صبر قد رونے لگا
باپ کے لہجے میں خطبہ دیکے زینب نے کہا
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

ہو کسی قاتل کا خنجر یا ہو دامان زمیں
خون کی سرخی تکلم چھپ نہیں سکتی کہیں
ہر گلی میں ہے یہ نعرہ آج بھی درویش کا
بس راج کرے گی کربوبلا
ذلت ہے مقدر۔۔۔
بس راج کرے گی۔۔۔

تم نے جس خون کو مقتل میں دبانا چاہا
آج وہ کوچہ و بازار میں آ نکلا ہے
کہیں شعلہ کہیں نعرہ کہیں پتھر بن کر
ایسے شعلے کہ بجھاؤ تو بجھاے نہ بنے
ایسے نعرے کہ دباؤ تو دباے نہ دبے
لبیک یا حسین