NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay shehre madina

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Mazhar Abidi


jangal may bhare ghar ko luta aayi hai zainab
ay shehre madina
abid ko kisi tarha bacha laayi hai zainab

na qasim o akbar rahe bhai bhi sidhare
sab hi gaye maare
be gor unhe dasht may chod aayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

wo shaam e ghariban ho ya wo sham ka bazaar
abid rahe lachaar
sab zakhm isi qalb may bhar laayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

kya kya na sitam raah may sadaat ne jhela
mai tujhse kahun kya
baaghi ki behan shaam may kehlayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

parda jo sikhati rahi wo bibi khule sar
phirti rahi dar dar
bazaaron may darbaron may ho aayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

aaja tu kaneezi may meri bola sitamgar
ay shaah ki dukhtar
ye lamha wohi tha jahan ghabrayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

zindan may kahin kho gaya bhai ka nageena
masoom sakina
do baaliyan zindan se le aayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

zindan se reha hoke bhi baakhi hai aseeri
matam kar tu bhi
rassi ke nishan is liye le aayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

ye zakhm mere qalb ka jeene nahi dega
hai zulm hi aisa
shabbir sare dasht hai ghar aayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

poochegi yehi fatema sughra abhi mujhse
akbar nahi aaye
dukhiya ke sawalon se hi ghabrayi hai zainab
ay shehre madina
jangal may bhare ghar...

جنگل میں بھرے گھر کو لٹا آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
عابد کو کسی طرح بچا لای ہے زینب

نہ قاسم و اکبر رہے بھائی بھی سدھارے
سب ہی گےء مارے
بے گور انہیں دشت میں چھوڑ آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

وہ شام غریباں ہو یا وہ شام کا بازار
عابد رہے لاچار
سب زخم اسی قلب میں بھر آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

کیا کیا نہ ستم راہ میں سادات نے جھیلا
میں تجھ سے کہوں کیا
باغی کی بہن شام میں کہلای ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

پردہ جو سکھاتی رہی وہ بی بی کھلے سر
پھرتی رہی در در
بازاروں میں درباروں میں ہو آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

آجا تو کنیزی میں میری بولا ستمگر
اے شاہ کی دختر
یہ لمحہ وہی تھا جہاں گھبرای ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

زنداں میں کہیں کھو گیا بھائی کا نگینہ
معصوم سکینہ
دو بالیاں زندان سے لے آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

زنداں سے رہا ہوکے بھی باقی ہے اسیری
ماتم کر تو بھی
رسی کے نشاں اس لئے لے آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

یہ زخم میرے قلب کا جینے نہیں دیگا
ہے ظلم ہی ایسا
شبیر سر دشت ہے گھر آی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔

پوچھے گی یہی فاطمہ صغرا ابھی مجھ سے
اکبر نہیں آے
دکھیا کے سوالوں سے ہی گھبرای ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر۔۔۔