NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay meri laadli

Nohakhan: Shahid Baltistani
Shayar: Mir Takallum


badne laga jab shaam e gariban ka andhera
zainab ne kisi shaks ko aate huwe dekha
tum kaun ho jab saani e zehra ne ye poocha
chehre se naqaab apne utha kar wo pukara
ke aaya hai najaf chod ke beti tera baba
ay meri laadli zainab

sunkar teri awaaz lehad chod chuka hoo
tere liye main bandhe kafan tod chuka hoo
naazon ki pali aa meri aaghosh may aaja
ay meri laadli...

abbas ka baba hoo khabar hai tujhe beti
ghairat mujhe nazron ko uthane nahi deti
beparda hai tu baap se dekha nahi jaata
ay meri laadli...

kaisa hai sitam tera bhara ghar hua khaali
pardes may tu ho gayi bin bhaiyon waali
tu rolay alamdaar ko mai deta hoo pehra
ay meri laadli...

bachon ko ghulamon ke barabar hi samajhle
bete na samajh khadim e akbar hi samajhle
kar aun o mohamed pe bhi kuch dayr to girya
ay meri laadli...

ghairon ki tarha door wo kyun baithi hai jaakar
mai aa na saka uska padar tha tahe khanjar
kya roothi hai is baat pe dada se sakina
ay meri laadli...

kal se hai safar tera bohat door ka beti
ye soch ke phat'ta hai kaleja mera beti
paidal tujhe aadat nahi chalne ki zyada
ay meri laadli...

zainab ne takallum kaha haye mera parda
jab bolae ali shaam ke darbar hai jana
tu tanha nahi jayegi mai saath chalunga
ay meri laadli...

بڑھنے لگے جب شام غریباں کے اندھیرے
زینب نے کسی شخص کو آتے ہوئے دیکھا
تم کون ہو جب ثانیء زہرا نے یہ پوچھا
چہرے سے نقاب اپنے اٹھا کر وہ پکارا
کہ آیا ہے نجف چھوڑ کے بیٹی تیرا بابا
اے میری لاڈلی زینب

سن کر تیری آواز لحد چھوڑ چکا ہوں
تیرے لئے میں بندھے کفن توڑ چکا ہوں
نازوں کی پلی آ میری آغوش میں آجا
اے میری لاڈلی۔۔۔

عباس کا بابا ہوں خبر ہے تجھے بیٹی
غیرت مجھے نظروں کو اٹھانے نہیں دیتی
بے پردہ ہے تو باپ سے دیکھا نہیں جاتا
اے میری لاڈلی۔۔۔

کیسا ہے ستم تیرا بھرا گھر ہوا خالی
پردیس میں تو ہو گیء بن بھائیوں والی
تو رولے علمدار کو میں دیتا ہوں پہرا
اے میری لاڈلی۔۔۔

بچوں کو غلاموں کے برابر ہی سمجھ لے
بیٹے نہ سمجھ خادم اکبر ہی سمجھ لے
کر عون و محمد پہ بھی کچھ دیر تو گریہ
اے میری لاڈلی۔۔۔

غیروں کی طرح دور وہ کیوں بیٹھی ہے جا کر
میں آ نہ سکا اس کا پدر تھا تہہ خنجر
کیا روٹھی ہے اس بات پہ دادا سے سکینہ
اے میری لاڈلی۔۔۔

کل سے ہے سفر تیرا بہت دور کا بیٹی
یہ سونچ کے پھٹتا ہے کلیجہ میرا بیٹی
پیدل تجھے عادت نہیں چلنے کی ذیادہ
اے میری لاڈلی۔۔۔

زینب نے تکلم کہا ہاے میرا پردہ
جب بولے علی شام کے دربار ہے جانا
تو تنہا نہیں جاے گی میں ساتھ چلوں گا
اے میری لاڈلی۔۔۔