NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay baba hussaina

Nohakhan: Irfan Haider
Shayar: Mazhar Abidi


jab shaam e ghariban may yaad e padar aayi
ghabrake sakina sar e maqtal chali aayi
daaman tha jala aur labon par tha ye nauha

ay baba hussaina ay baba hussaina
aina aina ay baba hussaina
roti hai sakina pyasi hai sakina
aina aina ay baba hussaina

hai aap jahan baba mujhko bhi bula-lije
ek baar mujhe apne seene pe sula-lije
bin aap ke dunya may bekaar hai ye jeena
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

hai kaan mere zakhmi aur khoon bhi hai jaari
qaimon ki rida'on ki karti hoo azadari
kuch dayr sukoon paaun mil jao aagar baba
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

kis samt tumhe dhoondun maqtal may bhatakti hoo
baba ki samajh kar mai har laash pe girti hoo
imdaad karo meri batlao mujhe rasta
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

kuch dayr lipat kar mai bas aap ke laashe se
wo dard suna'ungi baad aap ke jo paaye
har baat bataun mai mil jaye agar laasha
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

is dasht may roti hoo sab chaahne walon ko
har samt andhera hai tarsi hoo ujaalon ko
baad aap ke ay baba tareek hai ye dunya
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

shabbir ke nauhe se phir goonj utha sehra
ho tere masayib par qurban tera baba
ek teer laga dil par sunkar ye tera girya
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

irfan bhi rota hai is baat pe mazhar bhi
roti thi sakina bhi aur laasha e sarwar bhi
awaaz e padar sunkar us samt chali dukhiya
aina aina ay baba hussaina...
roti hai sakina pyasi hai...

جب شام غریباں میں یاد پدر آی
گھبرا کے سکینہ سر مقتل چلی آی
دامن تھا جلا اور لبوں پر تھا یہ نوحہ

اے بابا حسینا اے بابا حسینا
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے سکینہ
اینا اینا اے بابا حسینا

ہیں آپ جہاں بابا مجھکو بھی بلا لیجیے
اک بار مجھے اپنے سینے پہ سلا لیجیے
بن آپ کے دنیا میں بیکار ہے جینا
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

ہے کان میرے زخمی اور خون بھی ہے جاری
خیموں کی رداؤں کی کرتی ہوں عزاداری
کچھ دیر سکوں پاؤں مل جاؤ اگر بابا
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

کس سمت تمہیں ڈھونڈوں مقتل میں بھٹکتی ہوں
بابا کی سمجھ کر میں ہر لاش پہ گرتی ہوں
امداد کرو میری بتلاؤ مجھے رستہ
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

کچھ دیر لپٹ کر میں بس آپ کے لاشے سے
وہ درد سناؤں گی بعد آپ کے جو پاے
ہر بات بتاؤں میں مل جائے اگر لاشہ
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

اس دشت میں روتی ہوں سب چاہنے والوں کو
ہر سمت اندھیرا ہے ترسی ہوں اجالوں کو
بعد آپ کے اے بابا تاریک ہے یہ دنیا
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

شبیر کے نوحے سے پھر گونج اٹھا صحرا
ہو تیرے مصایب پر قربان تیرا بابا
اک تیر لگا دل پر سن کر یہ تیرا گریہ
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔

عرفان بھی روتا ہے اس بات پہ مظہر بھی
روتی تھی سکینہ بھی اور لاشہء سرور بھی
آواز پدر سن کر اس سمت چلی دکھیا
اینا اینا اے بابا حسینا
روتی ہے سکینہ پیاسی ہے۔۔۔