NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Allah allah mere allah

Nohakhan: Irfan Haider
Shayar: Mazhar Abidi


allah allah mere allah
guzri jahan jahan se
saydaniya khule sar
had mod pe qatl hua sajjad

hua pehla qatl mere baba
sajjad ka qaime ke andar
bhai ki sada e hal-min par
labbaik na keh paaya uthkar
phir uske baad baba
ek zinda laash ban kar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

ye shaam e ghariban may baba
zainab pe qayamat tooti thi
jab nok e sina se aada ne
mere sar se chadar cheeni thi
us din se dil may lekar
be-chaadri ka khanjar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

wo raat kati aur aayi sahar
phir qaidi bani har saydani
jab dekhi mere shaano may rasan
ghairat ke khuda ki saans ruki
karbobala se nikla
do baar qatl ho kar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

jab aayi mohibbo ki basti
taqseem ridayein hone lagi
nau baar ridayein humko mili
nau baar ridayein cheeni gayi
karbal se taaba kufa
kufa se shaam jaa kar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

wahan eid manayi jaati thi
aaine lagaye jaate thay
sadaat ki aamad par baba
bazaar sajaye jaate thay
bazaar may jo pahuchi
aale nabi khule sar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

darbar e sitam ka wo manzar
mai bhool nahi sakti baba
hai kaun aseeron may zainab
jab aake sitamgar ne poocha
aaise kayi masayib
qalbe hazeen pe seh kar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

na baap ko apne maqtal may
sajjad kafan de paaya tha
be gusl o kafan hi zindan may
laachar behan ko dafnaya
ho kar reha wahan se
is gham ka zehar pee kar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

irfan aur mazhar rote huwe
jab shaam ki raahon se guzre
bazaare jafa darbar e sitam
har gaam ye jumle yaad aaye
yasrab ki aurton se
kyun keh rahi thi muztar
had mod pe qatl hua...
guzri jahan jahan se..

اللہ اللہ میرے اللہ
گزری جہاں جہاں سے
سیدانیاں کھلے سر
ہر موڑ پہ قتل ہوا سجاد

ہوا پہلا قتل میرے بابا
سجاد کا خیمے کے اندر
بھائی کی صداے ھل من پر
لبیک نہ کہہ پایا اٹھکر
پھر اسکے بعد بابا
اک زندہ لاش بن کر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

یہ شام غریباں میں بابا
زینب پہ قیامت ٹوٹی تھی
جب نوکِ سناں سے اعدا نے
میرے سر سے چادر چھینی تھی
اس دن سے دل میں لے کر
بے چادری کا خنجر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

وہ رات کٹی اور آی سحر
پھر قیدی بنی ہر سیدانی
جب دیکھی میرے شانوں میں رسن
غیرت کے خدا کی سانس رکی
کربوبلا سے نکلا
دو بار قتل ہوکر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

جب آی محبوں کی بستی
تقسیم رداءیں ہونے لگی
نو بار ردایں ہمکو ملی
نو بار ردایں چھینی گیء
کربل سے تابہ کوفہ
کوفہ سے شام جا کر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

وہاں عید منائی جاتی تھی
آءینے لگاے جاتے تھے
سادات کی آمد پر بابا
بازار سجاے جاتے تھے
بازار میں جو پہنچی
آل نبی کھلے سر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

دربار ستم کا وہ منظر
میں بھول نہیں سکتی بابا
ہے کون اسیروں میں زینب
جب آکے ستمگر نے پوچھا
ایسے کیء مصائب
قلب حزیں پہ سہہ کر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

نہ باپ کو اپنے مقتل میں
سجاد کفن دے پایا تھا
بے غسل و کفن ہی زنداں میں
لاچار بہن کو دفنایا
ہوکر رہا وہاں سے
اس غم کا زہر پی کر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔

عرفان اور مظہر روتے ہوئے
جب شام کی راہوں سے گزرے
بازار جفا دربار ستم
ہر گام یہ جملے یاد آے
یثرب کی عورتوں سے
کیوں کہہ رہی تھی مضطر
ہر موڑ پہ قتل ہوا۔۔۔
گزری جہاں جہاں سے۔۔۔