NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akbar tumhe maloom

Nohakhan: Sahib e aalam
Shayar: Khursheed Jaunpur


akbar tumhe maloom hai kya maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho

is aalam e ghurbat may tumhe jaane du kaise
is dashte musibat may tumhe jaane du kaise
is waqt e qayamat may tumhe jaane du kaise
ay laal jo tum izne wigha maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

kya guzregi is baap ke dil par nahi socha
tu ne ye meri jaan ali akbar nahi socha
mar jaunga mai tujhse bichad kar nahi socha
tum mujhse zaeefi ka asa maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

dil rota hai nazron se agar door ho beta
kis tarha judaai teri manzoor ho beta
tum hi meri aankhein ho mera noor ho beta
mujhse meri aankhon ki ziya maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

dunya se gaya jis ghadi mehboob khuda ka
nana ki ziyarat ko tadapta tha nawasa
ay laal tujhe isliye khaaliq se tha maanga
maqbool hui meri dua maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

islam pe khud apna lahoo ran may bahao
seene pe sina shaan se maidan may khao
tasweer payambar ki tahe khaak milao
kya isliye marne ki riza maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

ek roz tujhe aan ke maanga tha phupi ne
athara baras naazon se paala tha phupi ne
beton se bhi zyada tumhe chaaha tha phupi ne
ehsaan jo zainab ne kiya maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

rakhte nahi tum iski khabar ay mere pyare
kis darja mohabbat hai teri dil may hamare
nana ki mere shakl hai paykar may tumhare
tum soorate mehboobe khuda maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

sar tera bhi jis waqt chadega sare naiza
hoga sare maidan juda sar bhi tumhara
hamshakle payambar ka gala kaatenge aada
goya mere nana ka gala maang rahe ho
tum baap se marne ki riza maang rahe ho
akbar tumhe maloom...

baba mujhe maloom hai kya maang raha hoo
ek baap se marne ki riza maang raha hoo

baba mujhe amma ne bhi kuch dars diya hai
aadabe wafa se mujh aagaah kiya hai
pehle mai marun aap se waada ye liya hai
bas is liye marne ki riza maang raha hoo
ek baap se marne ki riza maang raha hoo
baba mujhe maloom...

hai aap to baba bine khatoon e qayamat
aur maa hai meri adna si ek paykar e ismat
kya seene may uske nahi kuch jazba e ismat
mai maadare muztar ka kaha maan raha hoo
ek baap se marne ki riza maang raha hoo
baba mujhe maloom...

baba mujhe ehwaale dile zaar pata hai
hai sakht bahot manzilein dushwaar pata hai
aur deen ka mushkil may sardar pata hai
yun aap se marne ki riza maang raha hoo
ek baap se marne ki riza maang raha hoo
baba mujhe maloom...

mai shayir e hassaas jigar soz hoo khursheed
mehve gham e shabbir shab o roz hoo khursheed
aalaam o masayib se zameen doz hoo khursheed
kashakol may kuch ashk e aza maang raha hoo
ek baap se marne ki riza maang raha hoo
baba mujhe maloom...

اکبر تمہیں معلوم ہے کیا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو

اس عالم غربت میں تمہیں جانے دوں کیسے
اس دشت مصیبت میں تمہیں جانے دوں کیسے
اس وقتِ قیامت میں تمہیں جانے دوں کیسے
اے لال جو تم اذن وغا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

کیا گزرے گی اس باپ کے دل نہیں سونچا
تو نے یہ میری جاں علی اکبر نہیں سونچا
مر جاؤں گا میں تجھ سے بچھڑ کر نہیں سونچا
تم مجھ سے ضعیفی کا عصا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

دل روتا ہے نظروں سے اگر دور ہو بیٹا
کس طرح جدائی تیری منظور ہو بیٹا
تم ہی میری آنکھیں ہو میرا نور ہو بیٹا
مجھ سے میری آنکھوں کی ضیا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

دنیا سے گیا جس گھڑی محبوب خدا کا
نانا کی زیارت کو تڑپتا تھا نواسہ
اے لال تجھے اس لئے خالق سے تھا مانگا
مقبول ہوی میری دعا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

اسلام پہ قد اپنا لہو رن میں بہاؤ
سینے پہ سناں شان سے میدان میں کھاؤ
تصویر پیمبر کی تہہ خاک ملاؤ
کیا اس لئے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

اک روز تجھے آن کے مانگا تھا پھپھی نے
اٹھارہ برس نازوں سے پالا تھا پھپھی نے
بیٹوں سے بھی زیادہ تمہیں چاہا تھا پھپھی نے
احسان جو زینب نے کیا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

رکھتے نہیں تم اسکی خبر اے میرے پیارے
کس درجہ محبت ہے تیری دل میں ہمارے
نانا کی میرے شکل ہے پیکر میں تمہارے
تم صورت محبوب خدا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

سر تیرا بھی جس وقت چڑھے گا سر نیزہ
ہوگا سر میدان جدا سر بھی تمہارا
ہمشکل پیمبر کا گلا کاٹیں گے تو اعدا
گویا میرے نانا کا گلا مانگ رہے ہو
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو
اکبر تمہیں معلوم۔۔۔

بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہا ہوں
اک باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں

بابا مجھے اماں نے بھی کچھ درس دیا ہے
آدابِ وفا سے مجھے آگاہ کیا ہے
پہلے میں مروں آپ سے وعدہ یہ لیا ہے
بس اس لئے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
اک باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
بابا مجھے معلوم۔۔۔

ہیں آپ تو بابا بن خاتون قیامت
اور ماں ہے میری ادنیٰ سی اک پیکر عصمت
کیا سینے میں اس کے نہیں کچھ جزبہء عصمت
میں مادر مضطر کا کہا مان رہا ہوں
اک باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
بابا مجھے معلوم۔۔۔

بابا مجھے احوالِ دلِ زار پتہ ہے
ہے سخت بہت منزل دشوار پتہ ہے
اور دین کا مشکل میں ہے سردار پتہ ہے
یوں آپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
اک باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
بابا مجھے معلوم۔۔۔

میں شاعر حساس جگر سوز ہوں خرشید
محو غم شبیر شب و روز ہوں خرشید
آلام و مصایب سے زمیں دوز ہوں خرشید
کشکول میں کچھ آشک عزا مانگ رہا ہوں
اک باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہا ہوں
بابا مجھے معلوم۔۔۔