NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Mai jee ke kya karoo

Nohakhan: Sachey Bhai


umme rabab baithi shahe deen ki qabr par
thi mehwo is tarha se ke hat'ti na thi nazar
zainab badhi ye dekh ke boli jhuka ke sar
uthiye bahot hai door ka bhabi abhi safar
ek aah ki rabab ne yun phat gaya jigar
boli tadap ke zainabe muztar se nauhagar

beta hai karbala may to beti hai shaam may
kije dua ye bargahe khaas o aam may
so jaun mai bhi qabre shahe tashnakaam may
hasrat nahi kuch aur mai ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

asghar sidhare saamne nazron ke aap ki
toda hai dam sakina ne godhi may aap ki
jholi may kuch raha nahi bibi rabab ki
ye aa gaya hai daur may ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

jisse tha zindagi may ujaala chala gaya
cheh maah jisko godh may paala chala gaya
bibi hamara hasliyon wala chala gaya
kya reh gaya aur mai ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

maangegi mujhse fatema sughra jo bhai ko
doongi jawab kya mai bhala gham satayi ko
kya moo dikhaun ahmad e mursal ki jaayi ko
jeene ke hai ye to aur jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

shauhar hai mere saath na beta hai saath may
dekhun mai kiski raah jiyun kiski aas may
kya reh gaya hai jism ki boseeda saans may
mai jee chuki bas aur mai ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

bewa hassan ki kubra si beti ujad gayi
auron ka kya khud aap ki godhi ujad gayi
zehra ka ghar batool ki kheti ujad gayi
khud sochiye ba-ghaur mai ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

kabse khadi hoo aas lagaye mai raah may
jaun kahan bataye is haale tabaah may
shak hoke le le mujhko bhi apni panaah may
ay dashte zulm o jaur mai ab jee ke kya karoo
jee ke kya karoo

اُمِ رباب بیٹھی شاہِ دین کی قبر پر
تھی مہو اس طرح سے کہ ہٹتی نہ تھی نظر
زینب بڑھی یہ دیکھ کہ بولی جُھکا کہ سر
اُٹھیئے بہت ہے دور کا بھابھی ابھی سفر
اک آہ کی رباب نے یوں پھٹ گیا جگر
بولی تڑپ کہ زیِنب مُضطر سے نوحہ گر

بیٹا ہے کربلا میں تو بیٹی ہے شام میں
کیجے دعا یہ بارگاہِ خاص و عام میں
سو جائوں میں بھی قبرِ شاہِ تشنہ کام میں
حسرت نہیں کچھ اور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

اصغر سدھارے سامنے نظروں کے آپ کی
توڑا ہے دم سکینہ نے گودی میں آپ کی
جھولی میں کچھ رہا نہیں بی بی رباب کی
یہ آ گیا ہیں دور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

جس سے تھا زندگی میں اُجالا چلا گیا
چھ ماہ جس کو گود میں پالا چلا گیا
بی بی ہمارا ہسلیوں والا چلا گیا
کیا رہ گیا اور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

مانگے گی مُجھ سے فاطمہ صُغرا جو بھائی کو
دوں گی جواب کیا میں بھلا غم ستائی کو
کیا منہ دکھائوں احمدِ مُرسل کی جائی کو
جینے کے ہیں یہ تو اور جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

شوہر ہے میرے ساتھ نہ بیٹا ہے ساتھ میں
دیکھوں میں کس کی راہ جیوں کس کی آس میں
کیا رہ گیا ہے جسم کی بوسیدہ سانس میں
میں جی چُکی بس اور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

بیوہ حسن کی کُبرٰی سی بیٹی اُجڑ گئی
اوروں کا کیا خود آپ کی گودی اُجڑ گئی
زہرا کا گھر بتول کی کھیتی اُجڑ گئی
خود سوچیئے بغور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں

کب سے کھڑی ہوں آس لگائے میں راہ میں
جائوں کہاں بتائیں اس حال ِ تباہ میں
شک ہو کے لے لے مجھ کو بھی اپنی پناہ میں
اے دشتِ ظُلم و جور میں اب جی کے کیا کروں
جی کے کیا کروں