NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ek bemaar ko tum

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Alamdar Hashmi


ek bemaar ko tum itna rulaya na karo
zaalimo aale mohamed ko sataya na karo

shiddate dhoop se abid ka badan jalta hai
garm zanjeer ko tum itna hilaya na karo
ek bemaar ko tum...

natawan hai mera bemaar ye zainab ne kaha
tauq o zanjeer may abid ko phiraya na karo
ek bemaar ko tum...

do qadam chalte hi bemaar ko ghash aata hai
paon may chaale hai abid ko chalaya na karo
ek bemaar ko tum...

neend bemaar ko aati hai badi mushkil se
bediyan khaynch ke abid ko jagaya na karo
ek bemaar ko tum...

maang lo bali sakina se ye bachi hai saqi
baaliyan khaynch ke kano se rulaya na karo
ek bemaar ko tum...

sar khule zainab e dilgeer hai bazaaron may
berida aale mohamed ko phiraya na karo
ek bemaar ko tum...

qaid may phoot ke roti hai sakina bibi
baap ka sar usay har baar dikhaya na karo
ek bemaar ko tum...

hashmi rote hai irfan se nauha sun kar
munkiron rone do rone se rukaya na karo
ek bemaar ko tum...

ایک بیمار کو تم اتنا رلایا نہ کرو
ظالموں آل محمّد کو ستایا نہ کرو

شدت دھوپ سے عابد کا بدن جلتا ہے
گرم زنجیر کو تم اتنا ہلایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

ناتواں ہے میرا بیمار یہ زینب نے کہا
طوق و زنجیر میں عابد کو پھرایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

دو قدم چلتے ہی بیمار کو غش آتا ہے
پاؤں میں چھالے ہیں عابد کو چلایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

نیند بیمار کو آتی ہے بڑی مشکل سے
بیڑیاں کھینچ کے عابد کو جگایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

مانگ لو بالی سکینہ سے یہ بچی ہے سخی
بالیاں کھینچ کے کانوں سے رلایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

سر کھلے زینب دلگیر ہے بازاروں میں
بے ردا آل محمّد کو پھرایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

قید میں پھوٹ کے روتی ہے سکینہ بی بی
باپ کا سر اسے ہر بار دکھایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔

ہاشمی روتے ہیں عرفان سے نوحہ سن کر
منکروں رونے دو رونے سے رکایا نہ کرو
ایک بیمار کو تم۔۔۔