NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ek behan bhai ke

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Mubarak Jalalpuri


haye hamsheer e raza
ya masooma

qabr e masooma e qum se ab bhi aati hai sada
ek behan bhai ke laashe pe na jaane paayi

jis ghadi shehr e khurasan may bulwaye gaye
baani e zulm o jafa zulm se kab baaz aaye
tumko mamoon ne kyun zehr khila kar maara
qabr e masooma e qum se...

ay shehenshah e watan tumne bigada kya tha
mere pardesi aqi tera sahara kya tha
qum may mai tanha rahi tum thay toos may tanha
qabr e masooma e qum se...

zehr ne apna asar jis ghadi choda hoga
kat gaya hoga mere bhai kaleja tera
kitni takleef hui hogi ghareebul ghurba
qabr e masooma e qum se...

aap seene pe rakhe haath tadapte honge
bad naseebi ye meri mujhko bulaate honge
na wahan jaa saki mai tu na behan tak pahuncha
qabr e masooma e qum se...

mai teri laash pe hoti to ye nauha karti
kam se kam tere janaze ki to zeenat hoti
mere bhai ye magar mere muqaddar may na tha
qabr e masooma e qum se...

kya musafir ko kabhi zehr e dagha milta hai
jab safar may koi pardesi guzar jaata hai
yaad aa jaata hai hamshakle payambar bhaiya
qabr e masooma e qum se...

mujhse behtar kayi kismat thi mere jadda ki
laashe shabbir thi aur saani e zehra bhi thi
kam se kam bhai ki mayyat ko behan ne dekha
qabr e masooma e qum se...

haye irfan na tha mera muqaddar aisa
kya mubarak tera kam hoga ye nauha mera
mai bhi tanha thi kahin bhai kahin tha tanha
qabr e masooma e qum se...

ہاے ہمشیر رضا
یا معصومہ

قبر معصومہء قم سے اب بھی آتی ہے صدا
اک بہن بھائ کے لاشے پہ نہ جاے پای

جس گھڑی شہر خراساں میں بلواے گےء
بانیء ظلم و جفا ظلم سے کب بعض آے
تم کو مامون نے کیوں زہر کھلا کر مارا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

اے شہنشاہِ وطن تم نے بگاڑا کیا تھا
میرے پردیسی اخی تیرا سہارا کیا تھا
قم میں میں تنہا رہی تم تھے طوس میں تنہا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

زہر نے اپنا اثر جس گھڑی چھوڑا ہوگا
کٹ گیا ہوگا میرے بھائی کلیجہ تیرا
کتنی تکلیف ہوئی ہوگی غریب الغربا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

آپ سینے پہ رکھے ہاتھ تڑپتے ہونگے
بد نصیبی یہ میری مجھکو بلاتے ہونگے
نہ وطن جا سکی میں تو نہ بہن تک پہنچا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

میں تیری لاش پہ ہوتی تو یہ نوحہ کرتی
کم سے کم تیرے جنازے کی تو زینت ہوتی
میرے بھائی یہ مگر میرے مقدر میں نہ تھا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

کیا مسافر کو کبھی زہر دغا ملتا ہے
جب سفر میں کوئی پردیسی گزر جاتا ہے
یاد آجاتا ہے ہمشکل پیمبر بھیا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

مجھ سے بہتر کیء قسمت تھی میرے جدہ کی
لاشے شبیر تھی اور ثانیء زہرا بھی تھی
کم سے کم بھای کی میت کو بہن نے دیکھا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔

ہاے عرفان نہ تھا میرا مقدر ایسا
کیا مبارک تیرا کم ہوگا یہ نوحہ میرا
میں بھی تنہا تھی کہیں بھای کہیں تھا تنہا
قبر معصومہء قم سے۔۔۔