NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baba ka sar sakina

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Akhtar Sirsvi


baba ka sar sakina aghosh may utha ke
faryad kar rahi hai roodad e gham suna ke

shimre layeen ne mujhpar kya kya sitam na dhaye
lekin meri madad ko afsos tum na aaye
pani ko phaynkta tha zaalim dikha dikha ke
baba ka sar sakina..

bin parda zaalimo ne bazaar se guzara
maine tadap tadap ke tum ko bahot pukara
guzri hoo raaston se balon se moo ko chupa ke
baba ka sar sakina..

shimre layeen tamache jab mere maarta tha
nanha sa dil tadap ke tum ko pukarta tha
rote thay har qadam par sajjad sar ko jhuka ke
baba ka sar sakina..

rehwaar ke galay may ammu ka sar pada tha
meri aziyaton ka sadma unhe bada tha
aankhein lahoo lahoo thi khoone jigar baha ke
baba ka sar sakina..

saaye ko bhi safar may qaidi tadap rahe thay
raahon may har taraf se pathar baras rahe thay
laayi hai mujhko jaane kaise phupi bacha ke
baba ka sar sakina..

koi na tha hamari faryad sun'ne waala
be pardagi ne baba meri maa ko maar daala
khush ho rahe thay zaalim dar dar hame phirake
baba ka sar sakina..

karti rahi duayein zindan se sakina
jab tak khuloos e dil se padte rahe ye nauha
irfa aur akhtar aansu baha baha ke
baba ka sar sakina..

بابا کا سر سکینہ آغوش میں اٹھا کے
فریاد کر رہی ہے رودادِ غم سنا کے

شمر لعیں نے مجھ پر کیا کیا ستم ہیں ڈھاے
لیکن میری مدد کو افسوس تم نہ آے
پانی کو پھینکتا تھا ظالم دکھا دکھا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

بن پردہ ظالموں نے بازار سے گزارا
میں نے تڑپ تڑپ کے تم کو بہت پکارا
گزری ہوں راستوں سے بالوں سے منہ کو چھپا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

شمر لعیں طمانچے جب میرے مارتا تھا
ننھا سا دل تڑپ کے تم کو پکارتا تھا
روتے تھے ہر قدم پر سجاد سر جھکا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

رہوار کے گلے میں عمو کا سر پڑا تھا
میری اذیتوں کا صدمہ انہیں بڑا تھا
آنکھیں لہو لہو تھی خونِ جگر بہا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

ساے کو بھی سفر میں قیدی تڑپ رہے تھے
راہوں میں ہر طرف سے پتھر برس رہے تھے
لای ہے مجھکو جانے کیسے پھپھی بچا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

کوی نہ تھا ہماری فریاد سننے والا
بے پردگی نے بابا میری ماں کو مار ڈالا
خوش ہو رہے تھے ظالم در در ہمیں پھراکے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔

کرتی رہی دعائیں زندان سے سکینہ
جب تک خلوصِ دل سے پڑھتے رہیں یہ نوحہ
عرفان اور اختر آنسوں بہا بہا کے
بابا کا سر سکینہ۔۔۔