NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baba ab na aayenge

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Alamdar Hashmi


hum rote reh jayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge
bali sakina soja

shaam e ghariban aayi hai
kaisi udaasi chaayi hai
bikhre hai ran may laashe
kis jaa mera bhai hai
ke dhoondte hum reh jayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

jab jab pani maangogi
shimr tamache maarega
dikhla ke tum ko pani
mitti par wo daalega
hum pyase reh jayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

kis may itni himmat thi
ke aag lagaye qaimon may
ek bhai ke marte hi
aada aaye qaimon may
ab qaime jal jayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

nana ke deen ki khaatir
ranj o gham ye sehna hai
saare kunbe ko le kar
qaid may hum ko rehna hai
hum qaidi ban jayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

rote huwe baba keh kar
ran may jab tum jaogi
sun kar awaaz e sarwar
laashe ko tum paogi
tumko gham tadpayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

dar dar humko phirna hai
dukh ye saare sehna hai
ghar hai apna aur na bichona
khaak pa hum ko rehna hai
hum kaise so payenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

jo hum par guzri usko
hashmi kaise likhega
padte hi irfan ye nauha
saara aalam royega
aansu behke aayenge
bali sakina soja
baba ab na aayenge...

ہم روتے رہ جائینگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے
بالی سکینہ سو جا

شام غریباں آی ہے
کیسی اداسی چھائی ہے
بکھرے ہیں رن میں لاشے
کس جا میرا بھائی ہے
کہ ڈھونڈتے ہم رہ جائینگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

جب جب پانی مانگوگی
شمر طمانچے مارے گا
دکھلا کے تم کو پانی
مٹی پر وہ ڈالے گا
ہم پیاسے رہ جائینگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

کس میں اتنی ہمت تھی
کہ آگ لگائے خیموں میں
اک بھای کے مرتے ہی
اعدا آے خیموں میں
اب خیمے جل جائیں گے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

نانا کے دیں کی خاطر
رنج و غم یہ سہنا ہے
سارے کنبے کو لے کر
قید میں ہم کو رہنا ہے
ہم قیدی بن جاےنگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

روتے ہوئے بابا کہہ کر
رن میں جب تم جاؤ گی
سن کر آواز سرور
لاشے کو تم پاؤ گی
تم کو غم تڑپاےنگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

در در ہم کو پھرنا ہے
دکھ یہ سارے سہنا ہے
گھر ہے اپنا اور نہ بچھونا
خاک پہ ہم کو رہنا ہے
ہم کیسے سو پاےنگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔

جو ہم پر گزری اس کو
ہاشمی کیسے لکھے گا
پڑھتے ہی عرفاں یہ نوحہ
سارا عالم روے گا
آنسوں بہہ کے آےنگے
بالی سکینہ سو جا
بابا اب نہ آے نگے۔۔۔