NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Alwida ya hussain

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Moazzin Pasha


shaah e mashraqain fatema ke chain
ya maula hussain alvida
alvida ya hussain alvida ya hussain

roke zainab ye karti thi bain alvida
alvida ya hussain...

aaj akbar ki mayyat pe mai ro chuki
haath afsos abbas se dho chuki
kisko kisko kahun mai kisay kho chuki
bhai ab zulm ki inteha ho chuki
alvida ya hussain...

bhai kya kehke bewon ko samjhaungi
sar khule kaise darbar may jaungi
kaise baali sakina ko behlaungi
mere maajaye tumko kahan paungi
alvida ya hussain...

bhai tum thokare ran may khaate rahe
laash maidan se qaime may laate rahe
har tarha deen e haq ko bachate rahe
apni manzil ke nazdeek aate rahe
alvida ya hussain...

ab wo baysheer ki bezubani kahan
akbar e naujawan ki jawani kahan
ab wo abbas ki paasbani kahan
al-atash ki sadaein hai pani kahan
alvida ya hussain...

aao tumko galay se lagaye behan
aao bhaiya ke qurban jaye behan
kaun baaqi hai kisko bulaye behan
aao ghode pe khud hi bithaye behan
alvida ya hussain...

ran se halmin ki nagaah aayi sada
choor zakhmo se hai ab badan shaah ka
ay muazzam hui zulm ki imtehan
kat gaya shaah e bekas ka sookha gala
alvida ya hussain...

شاہ مشرقین فاطمہ کے چین
یا مولا حسین الوداع
الوداع یا حسین الوداع یا حسین

روکے زینب یہ کرتی تھی بین الوداع
الوداع یا حسین۔۔۔

آج اکبر کی میت پہ میں رو چکی
ہاتھ افسوس عباس کے کھو چکی
کسکو کسکو کہوں میں کسے کھو چکی
بھای اب ظلم کی انتہا ہو چکی
الوداع یا حسین۔۔۔

بھای کیا کہہ کے بیوؤں کو سمجھاؤں گی
سر کھلے کیسے دربار میں جاؤں گی
کیسے بالی سکینہ کو بہلاؤں گی
میرے مانجاے تم کو کہاں پاؤں گی
الوداع یا حسین۔۔۔

بھای تم ٹھوکریں رن میں کھاتے رہے
لاش میداں سے خیمے میں لاتے رہے
ہر طرح دین حق کو بچاتے رہے
اپنی منزل کے نزدیک آتے رہے
الوداع یا حسین۔۔۔

اب وہ بے شیر کی بے زبانی کہاں
اکبر نوجواں کی جوانی کہاں
اب وہ عباس کی پاسبانی کہاں
العطش کی صدایں ہے پانی کہاں
الوداع یا حسین۔۔۔

آؤ تم کو گلے سے لگاے بہن
آؤ بھیا کے قربان جاے بہن
کون باقی ہے کس کو بلاے بہن
آؤ گھوڑے پہ خود ہی بٹھاے بہن
الوداع یا حسین۔۔۔

رن سے ھل من کی ناگاہ آی صدا
چور زخموں سے ہے اب بدن شاہ کا
اے معزم ہوی ظلم کی امتحاں
کٹ گیا شاہ بے کس کا سوکھا گلا
الوداع یا حسین۔۔۔