NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas ke baazu

Nohakhan: Aqeel Abbas
Shayar: Aqeel Abbas


qaime may jo sheh laate hai abbas ke baazu
kulsoom ko tadpate hai abbas ke baazu

shabbir bhi maare gaye mai kar na sak kuch
is baat pa khoon rote hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

chin jaati hai phir zainab o kulsoom ki chadar
maqtal may jo kat jaate hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

hal min ki sada sunte hi shabbir ki ran se
darya pa tadap uth'te hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

zaalim ne sakina se kaha maar ke durre
kaise tujhe chudwate hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

zainab ki rida lut'ti hai bazaar may jab bhi
sajjad ko yaad aate hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

laasha ali akbar ka utha to nahi sakte
aapas may hi takrate hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

likhta hai aqeel aal e nabi ke jo masayib
to behre ata uth'te hai abbas ke baazu
qaime may jo sheh laate...

خیمے میں جو شہ لاتے ہیں عباس کے بازو
کلثوم کو تڑپاتے ہیں عباس کے بازو

شبیر بھی مارے گئے میں کر نہ سکا کچھ
اس بات پہ خوں روتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

چھن جاتی ہے پھر زینب و کلثوم کی چادر
مقتل میں جو کٹ جاتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

ھل من کی صدا سنتے ہی شبیر کی رن سے
دریا پہ تڑپ اٹھتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

ظالم نے سکینہ سے کہا مار کے درے
کیسے تجھے چھڑواتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

زینب کی ردا لٹتی ہے بازار میں جب بھی
سجاد کو یاد آتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

لاشہ علی اکبر کا اٹھا تو نہیں سکتے
آپس میں ہی ٹکراتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔

لکھتا ہے عقیل آل نبی کے جو مصائب
تو بہرِ عطا اٹھتے ہیں عباس کے بازو
خیمے میں جو شہ لاتے۔۔۔