NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas ka laasha

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Nasir Hussain


karbobala may dekh ke bikhre huwe laashe
har laasha e besar par bahot royi hai zahra
sar saare shaheedon ke jab aaye sare naiza
zahra ne kaha dekh ke abbas ka laasha
haye shaam haye bazaar haye ghairat e abbas

naizon par nazar aata hai abbas ka laasha
sab ko lahoo rulwaata hai abbas ka laasha

sambhla na gaya laashe pa zahra ne giraya
phir seene se laashe ko yehi keh ke lagaya
shabbir ke laashe sa hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

jaise hi kaha shaah ne sheron mere utho
labbaik kaho uthke hussain ibne ali ko
ye sunke bahot tadpa hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

barsaat tamachon ki sakina pa hui hai
hadh zulm o sitam ki ye yateema pa hui hai
har zulm pa sar patka hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

sarwar ne wilayat ke liye sar ko kataya
asghar ne wilayat ke liye teer hai khaaya
paigham yehi deta hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

qaime jo jale roke ye zainab ne sada di
ghazi na raha chin gayi behno ki rida bhi
ye dekh ke khoon rota hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

thay zakhm bahot sar pa tere ay mere ghazi
nauha ye padha karte hai tanhaai may mehdi
khoon ghaib may rulwaata hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

irfan se kehta hai jo gham aale nabi ka
nasir ho ya ho koi bhi ghamkhwar ali ka
har lafz pa yaad aata hai abbas ka laasha
naizon pa nazar aata hai...

کربوبلا میں دیکھ کے بکھرے ہوے لاشے
ہر لاشہء بے سر پر بہت روی ہے زہرا
سر سارے شہیدوں کے جب آے سر نیزہ
زہرا نے کہا دیکھ کے عباس کا لاشہ
ہاے شام ہاے بازار ہاے غیرت عباس

نیزوں پر نظر آتا ہے عباس کا لاشہ
سب کو لہو رلواتا ہے عباس کا لاشہ

سنبھلا نہ گیا لاشے پہ زہرا نے گرایا
پھر سینے سے لاشے کو یہی کہہ کے لگایا
شبیر کے لاشے سا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

جیسے ہی کہا شاہ نے شیروں میرے اٹھو
لبیک کہو اٹھکے حسین ابنِ علی کو
یہ سن کے بہت تڑپا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

برسات طمانچوں کی سکینہ پہ ہوی ہے
حد ظلم و ستم کی یہ یتیمہ پہ ہوی ہے
ہر ظلم پہ سر پٹکا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

سرور نے ولایت کے لئے سر کو کٹایا
اصغر نے ولایت کے لئے تیر ہے کھایا
پیغام یہی دیتا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

خیمے جو جلے روکے یہ زینب نے صدا دی
غازی نہ رہا چھن گیء بہنوں کی ردا بھی
یہ دیکھ کے خوں روتا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

تھے زخم بہت سر پہ تیرے اے میرے غازی
نوحہ یہ پڑھا کرتے ہیں تنہائی میں مہدی
خوں غیب میں رلواتا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔

عرفان سے کہتا ہے جو غم آل نبی کا
ناصر ہو یا کوئی بھی غم خوار علی کا
ہر لفظ پہ یاد آتا ہے عباس کا لاشہ
نیزوں پر نظر آتا ہے۔۔۔