NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aake rassiyon se

Nohakhan: Aqueel Abbas
Shayar: Iftekhar Hussain


aake rassiyon se sakina ko chudalo baba
main hoo mushkil may mujhe paas bulalo baba

bhaagte oont se baba mai kayi baar giri
durr bhi cheene mere dekho meri poshak jali
mujhko zindan ke andhero se nikalo baba
aake rassiyon se sakina ko...

neend aati nahi sone se bhi darr lagta hai
loo jo karwat to mere kaano se khoon rista hai
apne seene pe ghadi pal ko sulalo baba
aake rassiyon se sakina ko...

shimr se maangu jo pani to jhidak deta hai
phr mere saamne mitti pe gira deta hai
bhej ke ghazi ko do ghoont mangalo baba
aake rassiyon se sakina ko...

tere qatil mujhe rone se mana karte hai
kabhi roti hoo to abid pe sitam karte hai
khol ke roloo mujhe naize pe uthalo baba
aake rassiyon se sakina ko...

na koi mujhko bulaata hai sakina keh ke
shaam ke log bulaate hai yateema keh ke
thokre khaati sakina ko sambhalo baba
aake rassiyon se sakina ko...

baal khaynche hai mere rukh pe tamache maare
dekh ke ghazi ke sar ko rahe haste saare
haye zara apna wafadar jagado baba
aake rassiyon se sakina ko...

آکے رسیوں سے سکینہ کو چھڑالو بابا
میں ہوں مشکل میں مجھے پاس بلالو بابا

بھاگتے اونٹ سے بابا میں کیء بار گری
در بھی چھینے میرے دیکھو میری پوشاک جلی
مجھکو زنداں کے اندھیروں سے نکالو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔

نیند آتی نہیں سونے سے بھی ڈر لگتا ہے
لوں جو کروٹ تو میرے کانوں سے خوں رستا ہے
اپنے سینے پہ گھڑی پل کو سلالو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔

شمر سے مانگوں جو پانی تو جھڑک دیتا ہے
پھر میرے سامنے مٹی پہ گرا دیتا ہے
بھیج کے غازی کو دو گھونٹ منگالو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔

تیرے قاتل مجھے رونے سے منع کرتے ہیں
کبھی روتی ہوں تو عابد پہ ستم کرتے ہیں
کھول کے رولوں مجھے نیزے پہ اٹھالو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔

نہ کوئی مجھکو بلاتا ہے سکینہ کہہ کر
شام کے لوگ بلاتے ہیں یتیمہ کہہ کر
ٹھوکریں کھاتی سکینہ کو سنبھالو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔

بال کھینچے ہیں میرے رخ پہ بھی طمانچے مارے
دیکھ کے غازی کے سر کو رہے ہنستے سارے
ہاے زرا اپنا وفادار جگادو بابا
آکے رسیوں سے سکینہ کو۔۔۔