NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay mere sar bureeda

Nohakhan: Nasir Jahan
Shayar: Ahmed Faraz


hussain
ay mere sar bureeda badan dareeda
sada tera naam bar gazeeda

mai karbala ke lahoo dasht may tujhe
dushmano ke narghe may
taygh dar dast dekhta hoo

mai dekhta hoo ke tere saare rafeeq
sab hum nawa sabhi jaan farosh
apne saron ki fasle kata chuke hai
gulaab se jism apne khoon may naha chuke hai

hawaye jaankaah ke bagulay
charagh se taab naak chehre bujha chuke hai
musafirane rahe wafa lut luta chuke hai

aur ab faqat tu zameen ke is shafaq kadhe may
sitara e suboh ki tarha
roshni ka parcham liye khada hai
ye ek manzar nahi hai
ek daastan ka hissa nahi hai
ek waaqia nahi hai

yahin se tareekh
apne taaza safar ka awaaz kar rahi hai
yahin se insaniyat
nayi rif'aton ki parwaaz kar rahi hai

mai aaj is karbala may
be aabru nigun sar
shikast khurda khajil khada hoo
jahan se mera azeem hadi
hussain kal surkh roo gaya hai

mai jaan bacha kar
fana ke daldal may jaan balab hoo
zameen aur aasman ke izz o faqr
saare haraam mujh par
wo jaan luta kar
manara e arsh choo gaya hai

salaam us par
salaam us par

حُسین
اے میرے سر بریدہ بدن دریدہ
سدا ترا نام برگزیدہ

میں کربلا کے لہو دشت میں تجھے
دشمنوں کے نرغے میں
تیغ در دست دیکھتا ہوں

میں دیکھتا ہوں کہ تیرے سارے رفیق
سب ہمنوا سبھی جانفروش
اپنے سروں کی فصلیں کٹا چکے ہیں
گلاب سے جسم اپنے خوں میں نہا چکے ہیں

ہوائے جانکاہ کے بگولے
چراغ سے تابناک چہرے بجھا چکے ہیں
مسافرانِ رہِ وفا لٹ لٹا چکے ہیں

اور اب فقط تُو زمین کے اس شفق کدے میں
ستارۂ صبح کی طرح
روشنی کا پرچم لیے کھڑا ہے
یہ ایک منظر نہیں ہے
اک داستاں کا حصہ نہیں ہے
اک واقعہ نہیں ہے

یہیں سے تاریخ
اپنے تازہ سفر کا آغاز کر رہی ہے
یہیں سے انسانیت
نئی رفعتوں کو پرواز کر رہی ہے

میں آج اس کربلا میں
بے آبرو نگوں سر
شکست خوردہ خجل کھڑا ہوں
جہاں سے میرا عظیم ہادی
حسین کل سرخرو گیا ہے

میں جاں بچا کر
فنا کے دلدل میں جاں بلب ہوں
زمین اور آسمان کے عزّ و فخر
سارے حرام مجھ پر
وہ جاں لٹا کر
منارۂ عرش چھو گیا ہے

سلام اُس پر
سلام اُس پر