NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay maarkae quwwate

Nohakhan: Nasir Jahan
Shayar: Najm Afandi


ay maarka e quwwate islam ke jauhar
cheh maah ki muddat may qayamat ke barabar
nanhe se mujahid ali asghar ali asghar

maqsad tha wiladat ka faqat kaar e shahadat
ye baat hui aur kisi ko na mayassar
yakta hai teri khoon may doobi hui tasveer
tareekh dikhati nahi aisa koi manzar
nanhe se mujahid ali asghar...

baba ke sab andaaz hai dada ke tareekhe
neend aa gayi reti pe na takiya hai na bistar
uljhe hua baalon pa fida shaam e shab e gham
doobi hui nafson pa sitaron ki nichawar
nanhe se mujahid ali asghar...

dhalki hui gardan pe yadullah ke bosay
sookhe hue honton pe tasadduq lab e kausar
chitwan may chipaye hue akbar ki jawani
mutthi may dabaye hue sajjad ke jauhar
nanhe se mujahid ali asghar...

aankhon may chalakta hua masoom tabassum
gardan se tapakta hua khoon e dil e maadar
tareekh may hai sab tere bachpan ka saleeka
tu maut ki aagosh may aaya tha humak kar
nanhe se mujahid ali asghar...

jis waqt hui mohar tere zakhm e gulu ki
poora hua shabbir ke eesaar ka daftar
aaram se so ay shab e ashoor ke jaage
lori tujhe deta hai tere najm e sukhanwar
nanhe se mujahid ali asghar...

اے معرکہء قوت اسلام کے جوہر
چھ ماہ کی مدت میں قیامت کے برابر
ننھے سے مجاہد علی اصغر علی اصغر

مقصد تھا ولادت کا فقط کار شہادت
یہ بات ہوی اور کسی کو نہ میسر
یکتا ہے تیری خون میں ڈوبی ہوی تصویر
تاریخ دکھاتی نہیں ایسا کوئی منظر
ننھے سے مجاہد علی اصغر۔۔۔

بابا کے سب انداز ہیں دادا کے تریقے
نیند آ گئ ریتی پہ نہ تکیہ ہے نہ بستر
الجھے ہوا بالوں پہ فدا شام شب غم
ڈوبی ہوی نفسوں پہ ستاروں کی نچھاور
ننھے سے مجاہد علی اصغر۔۔۔

ڈھلکی ہوی گردن پہ یداللہ کے بوسے
سوکھے ہوے ہاتھوں پہ تصدق لب کوثر
چتواں میں چھپاے ہوے اکبر کی جوانی
مٹھی میں دباے ہوے سجاد کے جوہر
ننھے سے مجاہد علی اصغر۔۔۔

آنکھوں میں چھلکتا ہوا معصوم تبسم
گردن سے ٹپکتا ہوا خونِ دلِ مادر
تاریخ میں ہے سب تیرے بچپن کا سلیقہ
تو موت کی آغوش میں آیا تھا ہمک کر
ننھے سے مجاہد علی اصغر۔۔۔

جس وقت ہوی مہر تیرے زخم گلو کی
پورا ہوا شبیر کے ایثار کا دفتر
آرام سے سو اے شب عاشور کے جاگے
لوری تجھے دیتا ہے تیرے نجم سخنور
ننھے سے مجاہد علی اصغر۔۔۔