NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas ke laashe par

Nohakhan: Nasir Jahan
Shayar: Wazir


abbas ke laashe pa ye shabbir pukare
utho mere bhai
hum qaime se yahan aaye hai lene ko tumhare
utho mere bhai

peeri ka saath chin gaya hum hogaye be-aas
koi na raha paas
aa jao tumhi ay meri peeri ke sahare
utho mere bhai

kya ye bhi koi to mohabbat ka hai andaaz
ay aashiq e jaanbaaz
darya ko to keh kar gaye kausar ko sidhare
utho mere bhai

tum bali sakina ke liye laaye na pani
wo roti hai jaani
bachi ki zaban dekho aur asghar ke ishaare
utho mere bhai

qurban huwe mashk pe tum jaan e biradar
lekin mere safdar
tum arshe wafa ke ho chamakte huwe taare
utho mere bhai

dhaaras thi badi sab ko khayaal iska to karte
ghurbat may na marte
tum jeete magar hum bhi to himmat nahi haare
utho mere bhai

cheenege rida zainab o kulsoom ki ashraar
ay ghazi o jarraar
hum chod ke ab jaye unhe kis ke sahare
utho mere bhai

kehte thay wazir aah ye jab shaah e do aalam
ek hashr tha payham
tum mujhse zaeefi may juda ho gaye pyare
utho mere bhai

عباس کے لاشے پہ یہ شبیر پکارے
اٹھو میرے بھای
ہم خیمے سے یہاں آے ہیں لینے کو تمہارے
اٹھو میرے بھای

پیری کا ساتھ چھن گیا ہم ہوگےء بے آس
کوئی نہ رہا پاس
آ جاؤ تمہیں اے میری پیری کے سہارے
اٹھو میرے بھای

کیا یہ بھی کوئی تو محبت کا ہے انداز
اے عاشق جانباز
دریا کو تو کہہ کر گےء کوثر کو سدھارے
اٹھو میرے بھای

تم بالی سکینہ کے لئے لاے نہ پانی
وہ روتی ہے جانی
بچی کی زباں دیکھو اور اصغر کے اشارے
اٹھو میرے بھای

قربان ہوے مشک پہ تم جان برادر
لیکن میرے صفدر
تم عرش وفا کے ہو چمکتے ہوے تارے
اٹھو میرے بھای

ڈھارس تھی بڑی سب کو خیال اس کا تو کرتے
غربت میں نہ مرتے
تم جیتے مگر ہم بھی تو ہمت نہیں ہارے
اٹھو میرے بھای

چھینیں گے ردا زینب و کلثوم کی اشرار
اے غازی و جرار
ہم چھوڑ کے اب جاے انہیں کس کے سہارے
اٹھو میرے بھای

کہتے تھے وزیر آہ یہ جب شاہ دو عالم
اک حشر تھا پیہم
تم مجھ سے ضعیفی میں جدا ہو گےء پیارے
اٹھو میرے بھای