NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aale ahmed ki khooni

Nohakhan: Nasir Jahan


aal e ahmed ki khooni kahani
lo suno karbala ki zabani

kaisi afsurdaiye chandni hai
chaayi moharram par murzami hai

ek bibi hai maqtal may phirti
aur ek ek laashe pa girti

is tarha dil kisi ka na toote
apne pyaron se koi na choote

rayt par itne laashe pade hai
kaise moti kahan par pade hai

jalte qaimon may bache ghire hai
kaise inke muqadar phire hai

kaaf le kar koi yun khada hai
ek bemaar tanha pada hai

yun sakeena ke gauhar lutay hai
door darya pa shaane katay hai

silsila imtehan ka hai jaari
bibi zainab tumhari hai baari

nanhe bachon ko lori sunao
khaali jhoole ki dori hilao

dekho akbar pe girya na hona
misle maadar pareshan na hona

bhai bhai na yun tum pukaro
shaam ke simt ab tum sidharo

آل احمد کی خونی کہانی
لو سنو کربلا کی زبانی

کیسی افسردای چاندنی ہے
چھای محرم پر مرزمی ہے

اک بی بی ہے مقتل میں پھرتی
اور ایک ایک لاشے پہ گرتی

اس طرح دل کسی کا نہ ٹوٹے
اپنے پیاروں سے کوئی نہ چھوٹے

ریت پر اتنے لاشے پڑے ہیں
کیسے موتی کہاں پر پڑے ہیں

جلتے خیموں میں بچے گھرے ہیں
کیسے ان کے مقدر پھرے ہیں

کاف لے کر کوئی یوں کھڑا ہے
ایک بیمار تنہا پڑا ہے

یوں سکینہ کے گوہر لٹے ہیں
دور دریا پہ شانے کٹے ہیں

سلسلہ امتحاں کا ہے جاری
بی بی زینب تمہاری ہے باری

ننھے بچوں کو لوری سناؤ
خالی جھولے کی ڈوری ہلاؤ

دیکھو اکبر پہ گریہ نہ ہونا
مثل مادر پریشاں نہ ہونا

بھای بھای نہ یوں تم پکارو
شام کے سمت اب تم سدھارو