NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Haye ghurbate raza

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Ali Izhaar


rote hai shaahe waala roti hai binte zahra
haye ghurbate raza par
phir aaj karbala may aur shaam may hai giryan
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

hai qum ki shaahzadi aur hai zaban par naale
bikhraye baal apne nauha kuna hai behna
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

pardes ko chale jab maula raza to roye
jis dam watan ko choda veraan tha madina
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

zehre sitam se maara mazloom o be-watan ko
afsos zaalimo ko hargiz taras na aaya
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

pursa qubool kije maula ay musa kazim
aansu bahate hum bhi dene ko aaye pursa
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

taboot uth raha hai kaandho pe momino ke
girya hua hai barpa maram hua hai barpa
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

har shaam ro rahi hai bhai ko ek khwahar
har shaam hi bapa hai qum ki fiza may nauha
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

mayyat pe is pisar ki faryad e sayyeda thi
yasrab se aake dekho mai ro rahi hoo baba
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

maahe safar jo aaya yaad aagayi sakina
izhaar uske gham may roya phir aur roya
haye ghurbate raza par
rote hai shaahe waala...

روتے ہیں شاہِ والا روتی ہیں بنتِ زہرا
ہئے غربتِ رضا پر
پھر آج کربلا میں اور شام میں ہے گریہ
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

ہے قُم کی شاہزادی اور ہیں زباں پہ نالے
بکھرائے بال اپنے نوحہ کناں ہے بہنا
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

پردیس کو چلے جب مولا رضا تو روئے
جس دم وطن کو چھوڑا ویران تھا مدینہ
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

زہرِ ستم سے مارا مظلوم و بے وطن کو
افسوس ظالموں کو ہرگز ترس نہ آیا
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

پرسہ قبول کیجے مولا اے موسیٰ کاظم
آنسو بہاتے ہم بھی دینے کو آئے پرسہ
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

تابوت اٹھ رہا ہے کاندھوں پہ مومنوں کے
گریہ ہُوا ہے برپہ ماتم ہُوا ہے برپا
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

ہر شام رو رہی ہے بھائی کو ایک خواہر
ہر شام ہی بپا ہے قُم کی فضا میں نوحہ
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

میت پہ اِس پسر کی فریادِ سیدہ تھی
یثرب سے آ کے دیکھو میں رو رہی ہوں بابا
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔

ماہِ صفر جو آیا یاد آگئی سکینہ
اظہارؔ اُس کے غم میں رویا پھر اور رویا
ہئے غربتِ رضا پر
روتے ہیں شاہِ والا۔۔۔