NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bawafa bawafa

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


bawafa bawafa ghazi alamdar e wafa
baazu e shabbir hai fatema ki hai dua

kulle emaan hai ali kulle wafa abbas hai
karbala ke zaairon ka rehnuma abbas hai
hai yehi babul hawaij hai yehi haajat rawa
bawafa bawafa...

baap quran e shuja'at ye hai quran e wafa
baap hai saaqi e kausar ye hai pyason ki dua
aaj tak qabze may iske hai furaat o alqama
bawafa bawafa...

hai ragon may khoon abu talib ka iske maujizan
bu-tarabi khoon hai kyun kar na ho baatil shikan
tod daala is jari ne khyber e karbobala
bawafa bawafa...

aas dhaaras dastageeri khaadime shabbir bhi
karbala walon ka saqqa karbala jageer bhi
uske parcham ki hawa hai surat e khaake shifa
bawafa bawafa...

hogaye baazu qalam aur khoon may dooba alam
hat sake na alqama se phir bhi ghazi ke qadam
turbat e abbas par pehre pe hai darya khada
bawafa bawafa...

noke naiza par ruke sar kis tarha abbas ka
berida zainab ko dekhe ye shehenshahe wafa
isliye noke sina par sar na ghazi ka ruka
bawafa bawafa...

haye wo bali sakina aur tamachon ke nishan
kaan zakhmi tashnalab ahle sitam ke darmiyan
haath kano par rakhe kehti rahi mere chacha
bawafa bawafa...

dekhlo rehaan aur rizwan ghazi ka bharam
kha nahi sakta hai koi aaj bhi jhooti qasam
hai ata'on par ata nakshe qadam abbas ka
bawafa bawafa...

با وفا با وفا غازی علمدار وفا
بازوے شبیر ہے فاطمہ کی ہے دعا

کل ایمان ہے علی کل وفا عباس ہے
کربلا کے زایروں کا رہنما عباس ہے
ہے یہی باب الحوایج ہے یہی حاجت روا
با وفا با وفا۔۔۔

باپ قران شجاعت یہ ہے قرآن وفا
باپ ہے ساقیِ کوثر یہ ہے پیاسوں کی دعا
آج تک قبضے میں اس کے ہے فرات و علقمہ
با وفا با وفا۔۔۔

ہے رگوں میں خون ابو طالب کا اس کے معجزن
بو ترابی خون ہے کیوں کر نہ ہو باطل شکن
توڑ ڈالا اس جری نے خیبر و کربوبلا
با وفا با وفا۔۔۔

آس ڈھارس دستگیری قادم شبیر بھی
کربلا والوں کا سقہ کربلا جاگیر بھی
اس کے پرچم کی ہوا ہے صورت خاک شفا
با وفا با وفا۔۔۔

ہوگےء بازو قلم اور خون میں ڈوبا الم
ہٹ سکے نہ علقمہ سے پھر بھی غازی کے قدم
تربت عباس پر پہرے پہ ہے دریا کھڑا
با وفا با وفا۔۔۔

نوک نیزہ پر رکے سر کس طرح عباس کا
بے ردا زینب کو دیکھے یہ شہنشاہ وفا
اس لیئے نوک سناں پر سر نہ غازی کا رکا
با وفا با وفا۔۔۔

ہاے وہ بالی سکینہ اور طمانچوں کے نشاں
کان زخمی تشنہ لب اہلِ ستم کے درمیاں
ہاتھ کانوں پر رکھے کہتی رہی میرے چچا
با وفا با وفا۔۔۔

دیکھلو ریحان اور رضوان غازی کا بھرم
کھا نہیں سکتا ہے کوئی آج بھی جھوٹی قسم
ہے عطاؤں پر عطا نقش قدم عباس کا
با وفا با وفا۔۔۔