NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baba ko kaise bulaun

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Ali Izhaar


sochte thay ye maqtal may akbar
ran may baba ko kaise bulaun

phal hai barchi ka seene ke andar
ran may baba ko kaise bulaun

mere seene may tooti hai barchi
hai lahoo mere seene se jaari
kaise dekhenge baba ye manzar
ran may baba ko...

saans meri ukhadne lagi hai
chand lamho ki ab zindagi hai
kya karenge wo maqtal may aakar
ran may baba ko...

choomte thay jise roz baba
pesh e sarwar jo kham hi raha tha
khaak o khoon may bhara hai wohi sar
ran may baba ko...

khaake naiza zameen par gira hoo
dard jitna bhi hai seh raha hoo
dekh kar mujhko honge wo muztar
ran may baba ko...

hai shahe deen pe waqt e musibat
ho chuke haye ammu bhi ruqsat
ab kahan hai koi unka yawar
ran may baba ko...

mai tadapta hoo reti pe ban may
ho raha ha izafa dukhan may
aake tadpenge maqtal may sarwar
ran may baba ko...

mai pukarunga baba ko jis dam
honge qaime may jab shaah pur nam
meri haalat samajhlegi maadar
ran may baba ko...

tha ye izhaar nauha jawan ka
aayenge ran may jab mere baba
khayenge wo to thokar pe thokar
ran may baba ko...

سوچتے تھے یہ مقتل میں اکبر
رن میں بابا کو کیسےبلائوں

پھل ہے برچھی کا سینے کے اندر
رن میں بابا کو کیسے بلائوں

میرے سینے میں ٹوٹی ہے برچھی
ہے لہو میرے سینے سے جاری
کیسے دیکھیں گے بابا یہ منظر
رن میں بابا کو۔۔۔

سانس میری اکھڑنے لگی ہے
چند لمحوں کی اب زندگی ہے
کیا کریں گے وہ مقتل میں آکر
رن میں بابا کو۔۔۔

چومتے تھے جسے روز بابا
پیشِ سرور جو خم ہی رہا تھا
خاک و خوں میں بھرا ہے وہ ہی سر
رن میں بابا کو۔۔۔

کھا کے نیزہ زمیں پر گرا ہوں
درد جتنا بھی ہے سہہ رہا ہوں
دیکھ کر مجھ کو ہوں گے وہ مضطر
رن میں بابا کو۔۔۔

ہے شہہِ دیں پہ وقتِ مصیبت
ہو چکے ہائے عمو بھی رخصت
اب کہاں ہے کوئی اُن کا یاور
رن میں بابا کو۔۔۔

میں تڑپتا ہوں ریتی پہ بن میں
ہو رہا ہے اضافہ دُکھن میں
آ کے تڑپیں گے مقتل میں سرور
رن میں بابا کو۔۔۔

میں پکاروں گا بابا کو جس د م
ہوں گے خیمے میں جب شاہ پُر نم
میری حالت سمجھ لے گی مادر
رن میں بابا کو۔۔۔

تھا یہ اظہارؔ نوحہ جواں کا
آئیں گے رن میں جب میرے بابا
کھائیں گے وہ تو ٹھوکر پہ ٹھوکر
رن میں بابا کو۔۔۔