NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baap se uthega

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Ali Izhaar


boli laila ke tu marne ko jo aamada hai
tune humshakle nabi ye bhi zara socha hai
tu ke kadiyal hai jawan aur padar boodha hai
ke baap se uthega akbar tera laasha kaise

baap se uthega akbar tera laasha kaise
wo isay qaime may le jayega tanha kaise
baap se uthega akbar…

wo to is aas pe jeeti hai ke tu aayega
apni behna ko bhare kunbe se milwayega
dekhna chod de sughra tera rasta kaise
baap se uthega akbar…

tune jin galiyon may bachpan hai guzara apna
ab wahan kaun hai humshakle nabi tu hi bata
bhool jayega bhala tujhko madina kaise
baap se uthega akbar…

chaar jaanib hai yahan tashnalabi ke dere
tujhse bad kar hai zaban khushk padar ki tere
phir bhi dekhein tera baba tujhe pyasa kaise
baap se uthega akbar…

tune kyun us se hi marne ki raza maangi hai
jisne har dam tere jeene ki dua maangi hai
ye phupi bin tere reh payegi zinda kaise
baap se uthega akbar…

laal ko paala hai aankhon may basa kar tumne
bar sare karbobala maadar e akbar tumne
zakhm seene pe jawan laal ke dekha kaise
baap se uthega akbar…

ghar se maqtal ko jo naazon ka pala aata hai
phir se aakar koi akbar se lipat jaata hai
yun uthe aur na gire qaime ka parda kaise
baap se uthega akbar…

gham raha bete ka beenayi to baakhi hi na thi
kaampte haath thay shabbir se pooche koi
tumne phal barchi ka seene se nikaala kaise
baap se uthega akbar…

bayn laila ke thay zakhmi jo tere chehra hai
khaak balon may hai peshani se khoon behta hai
ye batade mai banaun tujhe dulha kaise
baap se uthega akbar…

hum ne izhaar ghame shaah may matam hi kiya
yaad e akbar may sada aankh ko purnam hi kiya
ho bapa shaam o sehar dil may na girya kaise
baap se uthega akbar…

بولی لیلیٰ کے تو مرنے کو جو آمادہ ہے
تو نے ہمشکل نبی یہ بھی زرا سوچا ہے
تو کہ کڑیل ہے جواں اور پدر بوڑھا ہے
کہ باپ سے اٹھے گا اکبر تیرا لاشہ کیسے

باپ سے اٹّھے گا اکبر تیرا لاشہ کیسے
وہ اسے خیمے میں لے جائے گا تنہا کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

وہ تو اس آس پہ جیتی ہے کہ تُو آئے گا
اپنی بہنا کو بھرے کنبے سے ملوائے گا
دیکھنا چھوڑ دے صغرا تیرا رستہ کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

تُو نے جن گلیوں میں بچپن ہے گزارا اپنا
اب وہاں کون ہے ہمشکلِ نبی تُو ہی بتا
بُھول جائے گا بھلا تجھ کو مدینہ کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

چار جانب ہیں یہاں تشنہ لبی کے ڈیرے
تجھ سے بڑھ کر ہے زباں خشک پدر کی تیرے
پِھر بھی دیکھے تیرا بابا تجھے پیاسا کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

تُو نے کیوں اُس سے ہی مرنے کی رضا مانگی ہے
جس نے ہر دم تیرے جینے کی دعا مانگی ہے
یہ پھوپھی بِن تیرے رہ پائے گی زندہ کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

لعل کو پالا ہے آنکھوں میں بسا کر تم نے
بر سرِ کرب و بلا مادرِ اکبر تم نے
زخم سینے پہ جواں لعل کے دیکھا کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

گھر سے مقتل کو جو نازوں کا پلا آتا ہے
پِھر سے آکر کوئی اکبر سے لپٹ جاتا ہے
یوں اٹھے اور نہ گرے خیمے کا پردہ کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

غم رہا بیٹے کا بینائی تو باقی ہی نہ تھی
کانپتے ہاتھ تھے شبیر سے پوچھے کوئی
تم نے پھل برچھی کا سینے سے نکالا کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

بین لیلی کے تھے زخمی جو تیرا چہرہ ہے
خاک بالوں میں ہے پیشانی سے خوں بہتا ہے
یہ بتا دے میں بنائوں تجھے دولہا کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔

ہم نے اظہار غمِ شاہ میں ماتم ہی کیا
یادِ اکبر میں صدا آنکھ کو پرنم ہی کیا
ہو بپا شام و سحر دل میں نہ گریہ کیسے
باپ سے اٹّھے گا اکبر۔۔۔