NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baab e saat par

Nohakhan: Rizwan Zaidi Party
Shayar: Mir Takallum


baab e sa'at par khadi hai fatema ki betiyan
shaam ke darbar may hai jashn ki tayyarian

wa hussaina ki sada hai itrat e athaar may
jaane kya guzri hai in par shaam ke bazaar may
khoon may tar hogayi kaunain ki shehzadiyan
baab e sa'at par khadi...

subho se thak jaate hai jab shaami pathar maar kar
shaam hote hi chale jaate hai zaalim apne ghar
raat bhar qaidi khade rehte hai zer e aasman
baab e sa'at par khadi...

gham to ye hai chaar jaanib kalma go aabad thay
chadarein phir bhi na di sar ko chupane ke liye
sar khule kitni azan'ein sun chuki hai bibiyan
baab e sa'at par khadi...

koi jaa kar ye bata do bekas o mazloom ko
mil rahi hai ye yateemi ki saza masoom ko
ab sakina ko tamache de rahe hai loriyan
baab e sa'at par khadi...

khoon may baqir ke shaamil ghairat e abbas hai
hai abhi kamsin magar isko bhi ye ehsaas hai
bazm may noshi kahan aur saani e zahra kahan
baab e sa'at par khadi...

ban gaya tareekh e ghurbat shaam o kufa ka safar
zulm jitne ho gaye hai be-khata sadaat par
mujrimon par bhi kahan hoti hai itni sakhtiyan
baab e sa'at par khadi...

abid e bemaar aansu khoon ke barsata raha
be-ridayi ka isay zainab ki gham khaata raha
aate aate shaam tak boodha hua hai ye jawan
baab e sa'at par khadi...

jaa ke chehlum par takallum ne ye dekha hai samaa
kal jahan se be-rida guzri thi sab saydaniya
chadarein ab naam pe zainab ke bat'thi hai wahan
baab e sa'at par khadi...

باب ساعت پر کھڑی ہے فاطمہ کی بیٹیاں
شام کے دربار میں ہے جشن کی تیاریاں

وا حسینا کی صدا ہے عطرت اطہار میں
جانے کیا گزری ہے ان پر شام کے بازار میں
خون میں تر ہوگیء کونین کی شہزادیاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

صبح سے تھک جاتے ہیں جب شامی پتھر مار کر
شام ہوتے ہی چلے جاتے ہیں ظالم اپنے گھر
رات بھر قیدی کھڑے رہتے ہیں زیرِ آسماں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

غم تو یہ ہے چار جانب کلمہ گو آباد تھے
چادریں پھر بھی نہ دی سر کو چھپانے کے لئے
سر کھلے کتنی اذانیں سن چکی ہے بی بیاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

کوئی جا کر یہ بتا دو بے کس و مظلوم کو
مل رہی ہے یہ یتیمی کی سزا معصوم کو
اب سکینہ کو طمانچے دے رہے ہیں لوریاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

خون میں باقر کے شامل غیرتِ عباس ہے
ہے ابھی کمسن مگر اس کو بھی یہ احساس ہے
بزم میں نوشی کہاں اور ثانی زہرا کہاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

بن گیا تاریخ غربت شام و کوفہ کا سفر
ظلم جتنے ہو گےء ہیں بے خطا سادات پر
مجرموں پر بھی کہاں ہوتی ہے اتنی سختیاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

عابد بیمار آنسوں خون کے برساتا رہا
بے ردائی کا اسے زینب کی غم کھاتا رہا
آتے آتے شام تک بوڑھا ہوا ہے یہ جواں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔

جا کے چہلم پر تکلم نے یہ دیکھا ہے سماں
کل جہاں سے بے ردا گزری تھی سب سیدانیاں
چادریں اب نام پہ زینب کے بٹتی ہیں وہاں
باب ساعت پر کھڑی۔۔۔