NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay sheerkhar asghar

Nohakhan: Sajjad & Hooria Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


ay sheer khaar asghar ay tashnalab sakina
hum nanhe zakiron ka pursa qubool karna

pani ko dono tarse maidan e karbala may
dono rahe hamesha shabbir ki dua may
bhai behan ka bistar shabbir ka tha seena
ay sheer khaar asghar...

dono ki gardano se dekha hai khoon jaari
rasssi ke ek galay may ek teer se tha zakhmi
ek shaam ki musafir ek karbala ka pyasa
ay sheer khaar asghar...

ek noor e chashme maadar ek baap ka sapooti
na wo juda hua tha na ye juda hui thi
maa baap se qaza ne pardes may cheena
ay sheer khaar asghar...

ek sheer khaar bacha ek naunehaal bachi
dono ne laaj rakhli mazloom e karbala ki
thukrake alqama ko pani piya qaza ka
ay sheer khaar asghar...

daaman jala behan ka bhai ka ban may jhoola
bhai ne teer khaaya hamsheer ne tamacha
sughra se phir watan may milne gaya koi na
ay sheer khaar asghar...

seene pe sone waali jhoole may may sona waala
sote hai khaak par ab shehzadi shaahzada
hum sab hussaini bache padte hai inka nauha
ay sheer khaar asghar...

ay asghar o sakina bachon ka hai ye waada
haathon se chote chote dete rahenge pursa
aansu ki hai sabeelien haazir lahoo hamara
ay sheer khaar asghar...

sajjad o hooria ki meesam ki nauhakhani
rehaan azmi ke lafzon ki tarjumani
ye zindagi hamari hai aap hi ka sadqa
ay sheer khaar asghar...

اے شیر خوار اصغر اے تشنہ لب سکینہ
ہم ننھے ذاکروں کا پرسہ قبول کرنا

پانی کو دونوں ترسے میدان کربلا میں
دونوں رہے ہمیشہ شبیر کی دعا میں
بھای بہن کا بستر شبیر کا تھا سینہ
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

دونوں کی گردنوں سے دیکھا ہے خون جاری
رسی کے اک گلے میں اک تیر سے تھا زخمی
اک شام کی مسافر اک کربلا کا پیاسا
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

اک نور چشمِ مادر اک باپ کا سپوتی
نہ وہ جدا ہوا تھا نہ یہ جدا ہوی تھی
ماں باپ سے قضا نے پردیس میں چھینا
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

اک شیر خوار بچہ اک نونہال بچی
دونوں نے لاج رکھ لی مظلوم کربلا کی
ٹھکرا کے علقمہ کو پانی پیا قضاء کا
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

دامن جلا بہن کا بھای کا بن میں جھولا
بھای نے تیر کھایا ہمشیر نے طمانچہ
صغریٰ سے پھر وطن میں ملنے گیا کوئی نہ
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

سینے پہ سونے والی جھولے میں سونے والا
سوتے ہیں خاک پر اب شہزادی شاہ زادہ
ہم سب حسینی بچے پڑھتے ہیں ان کا نوحہ
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

اے اصغر و سکینہ بچوں کا ہے یہ وعدہ
ہاتھوں سے چھوٹے چھوٹے دیتے رہیں گے پرسہ
آنسوں کی ہے سبیلیں حاضر لہو ہمارا
اے شیر خوار اصغر۔۔۔

سجاد و حوریہ کی میثم کی نوحہ خوانی
ریحان اعظمی کے لفظوں کی ترجمانی
یہ زندگی ہماری ہے آپ ہی کا صدقہ
اے شیر خوار اصغر۔۔۔