NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay musa e kazim

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


ay musa e kazim ay mere baab e hawaij
mohtaaj e dua hoo mai tere dar ka gada hoo
mai risq e aza risq e wafa maang raha hoo
ay musa e kazim...

mai ghair ke dar ka to sawali nahi maula
maulayi hoo aur zarf se khaali nahi maula
pehle bhi to mai aap ke tukdo pe pala hoo
ay musa e kazim...

neymat ghame shabbir ki naslon se na jaaye
baitha hoo tere dar pe msi daaman pe bichaye
maana hoo gunehgaar magar ahle aza hoo
ay musa e kazim...

jo aap ke nabiyon ke madadgaar hai maula
mansab wohi allah ne hai aap ko baksha
mai aap ke rauze ko najaf jaan raha hoo
ay musa e kazim...

maqrooz hoo nadaar hoo bemaar o pareshan
hai aap maseeha e jahan waaris e quran
tukda tere khaane se bacha maang raha hoo
ay musa e kazim...

jo godiyan aulaad ki neymat se hai khaali
pakde huwe wo aap ke rauze ki hai jaali
mai bhi kisi kone may yahin mehwe dua hoo
ay musa e kazim...

ay baab e ata waasta zainab ki rida ka
matam se jo chadar ka diya karti hai pursa
un behno ke parde ki baqa maang raha hoo
ay musa e kazim...

kuch aisi kaneezein bhi hai sarkar tumhari
bachpan se sare farsh e aza umr guzaari
ghar unke base unke areeze ki nawa hoo
ay musa e kazim...

maula ka azadar namazi bhi bada ho
aaqa tere rauze pe ye maqbool dua ho
ye arz liye aap ki chaukat pe khada hoo
ay musa e kazim...

baghdad may jo zulm o sitam aap pe guzre
wo soch ke maula mere aansu nahi rukte
us gham se sabab aaj bhi mai mehve buka hoo
ay musa e kazim...

zanjeeron may jakda hua taboot rakha tha
mazdooron ne maula tere laashe ko uthaya
purse ke liye shehr e khurasan gaya hoo
ay musa e kazim...

mai musa e kazim ka azadar hoo rehaan
mashad may chalo pursa kuna is tarha rizwan
khud maula raza kehde tumhe deta dua hoo
ay musa e kazim...

اے موسی کاظم اے موسی کاظم باب حوایج
محتاج دعا ہوں میں تیرے در کا گدا ہوں
میں رزق عزا رزق وفا مانگ رہا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

میں غیر کے در کا تو سوالی نہیں مولا
مولای ہوں اور ظرف سے خالی نہیں مولا
پہلے بھی تو میں آپ کے ٹکڑوں پہ پلا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

نعمت غمِ شبیر کی نسلوں سے نہ جاے
بیٹھا ہوں تیرے در پہ میں دامان بچھاے
مانا ہوں گنہگار مگر أہل عزا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

جو آپکے نبیوں کے مددگار ہیں مولا
منصب وہی اللہ نے ہیں آپکو بخشا
میں آپکے روضے کو نجف جان رہا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

مقروض ہوں نادار ہوں بیمار و پریشان
ہیں آپ مسیحاے جہاں وارث قرآں
ٹکڑا تیرے کھانے سے بچا مانگ رہا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

جو گودیاں اولاد کی نعمت سے ہیں خالی
پکڑے ہوے وہ آپکے روضے کی ہے جالی
میں بھی کسی کونے میں یہی محو دعا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

اے باب عطا واسطہ چادر کی ردا کا
ماتم سے جو چادر کا دیا کرتی ہے پرسہ
ان بہنوں کے پردے کی بقا مانگ رہا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

کچھ ایسی کنیزیں بھی ہیں سرکار تمہاری
بچپن سے سر فرش عزا عمر گزاری
گھر انکے بسیں انکے عریضے کی نوا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

مولا کا عزادار نمازی بھی بڑا ہو
آقا تیرے روضے پہ یہ مقبول دعا ہو
یہ عرض لیےء آپکی چوکھٹ پہ کھڑا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

بغداد میں جو ظلم و ستم آپ پہ گزرے
وہ سوچ کے مولا میرے آنسوں نہیں رکتے
اس غم سے شباب آج بھی میں محو بکا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

زنجیروں میں جکڑا ہوا تابوت رکھا تھا
مزدوروں نے مولا تیرے لاشے کو اٹھایا
پرسے کے لئے شہر خراسان گیا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔

میں موسی کاظم کا عزادار ہوں ریحاں
مشہد میں چلو پرسہ کناں اس طرح رضواں
قد مولا رضا کہہ دے تمہیں دیتا دعا ہوں
اے موسی کاظم۔۔۔