NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay chacha mai tera

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Noor Ali


ay chacha mai tera sajjad hoo pehchaan mujhe
kha gaye haye sitam shaam ke zindan mujhe

ay chacha sunle ye pur dard kahani meri
dhal gayi ranj o alam sehte jawani meri
taziyano se sataya gaya har aan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

karz yun ajre risalat ka chukate thay layeen
kalma pad pad ke mujhe durre lagate thay layeen
yaad hai aaj bhi ummat ka ye ehsaan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

ay chacha shaam ki wo raahein ajab raahein thi
tees thi zakhmo may aur lab par mere aahein thi
jeena dushwaar tha aur marna tha aasan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

kabhi zindano se guzra kabhi darbaro se
dard sehte huwe guzra hoo mai bazaaron se
gaam dar gaam rulaate thay musalaman mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

jinki hadh koi nahi aise alam dekhe hai
bhare bazaar may beparda haram dekhe hai
saikdon gham thay jo karte thay pareshan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

zulm ne loota hai jangal may bhara ghar mera
is tarha ujda hai maqtal may bhara ghar mera
bhari basti bhi nazar aati hai veraan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

mai lahoo rota tha wo zakhm lagate thay mujhe
shaami pani ki jagah pyaas pilaate thay mujhe
qaidkhano may rakha jaata tha mehman mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

ay chacha ye bhi qayamat ki ghadi aayi hai
jalay kurte may behan qaid may dafnayi hai
sone deta nahi hamsheer ka ye dhyan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

nauha abid ka tha jab aaye watan noor ali
peet kar sar yehi karte thay sukhan noor ali
dafn karna pade khud haathon se armaan mujhe
ay chacha mai tera sajjad...

اے چچا میں تیرا سجاد ہوں پہچان مجھے
کھا گےء ہاے ستم شام کے زندان مجھے

اے چچا سن لے یہ پر درد کہانی میری
ڈھل گیء رنج و الم سہتے جوانی میری
تازیانوں سے ستایا گیا ہر آن مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

قرض یوں اجر رسالت کا چکاتے تھے لعیں
کلمہ پڑ پڑ کے مجھے درے لگاتے تھے لعیں
یاد ہے آج بھی امت کا یہ احسان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

اے چچا شام کی وہ راہیں عجب راہیں تھی
تیس تھی زخموں میں اور لب پر میرے آہیں تھی
جینا دشوار تھا اور مرنا تھا احسان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

کبھی زندانوں سے گزرا کبھی درباروں سے
درد صیحت ہوے گزرا ہوں میں بازاروں سے
گام در گام رلاتے تھے مسلمان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

جن کی حد کوئی نہیں ایسے الم دیکھے ہیں
بھرے بازار میں بے پردہ حرم دیکھے ہیں
سیکڑوں غم تھے جو کرتے تھے پریشان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

ظلم نے لوٹا ہے جنگل میں بھرا گھر میرا
اس طرح اجڑا ہے مقتل میں بھرا گھر میرا
بھری بستی بھی نظر آتی ہے ویران مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

میں لہو روتا تھا وہ زخم لگاتے تھے مجھے
شامی پانی کی جگہ پیاس پلاتے تھے مجھے
قید خانوں میں رکھا جاتا تھا مہمان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

اے چچا یہ بھی قیامت کی گھڑی آی ہے
جلے کرتے میں بہن قید میں دفنای ہے
سونے دیتا نہیں ہمشیر کا یہ دھیان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔

نوحہ عابد کا تھا جب آے وطن نور علی
پیٹ کر سر یہی کرتے تھے سخن نور علی
دفن کرنا پڑے قد ہاتھوں سے ارمان مجھے
اے چچا میں تیرا سجاد۔۔۔