NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay baqia mujhe

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Ali Izhaar


ay baqia mujhe tera gham hai
is liye to ye aankh purnam hai

jab se tera ye inhedaam hua
dil may bas gham ka hi khayaam hua
ab to ek ezteraab e payham hai
ay baqia mujhe…

qabre zehra jo dhaayi aada ne
kya bigada tha inka dukhiya ne
hum to jitna bhi roye wo kam hai
ay baqia mujhe…

hai jo be-saaya turbat e sajjad
kyun na hum ghamzada kare faryad
is se bad kar bhi koi kya gham hai
ay baqia mujhe…

qabr baqar ki aur jafar ki
hai shakista jo qabr shabbar ki
har taraf sog ka sa aalam hai
ay baqia mujhe…

keh utha dekh kar dil e muztar
haye re qabre maadar e hyder
is ki tauqeer to muqadam hai
ay baqia mujhe…

jab bhi tashreef layenge mehdi
hoga taameer phir baqia bhi
mujhko ek yehi aas har dam hai
ay baqia mujhe…

kyun na awaaze haq uthaye hum
kaise baatil se khauf khaye hum
sar pe jab bawafa ka parcham hai
ay baqia mujhe…

jis ne zehra ka dil dukhaya hai
aur unhe umr bhar rulaaya hai
us pe lanat hi ab to har dam hai
ay baqia mujhe…

chain izhaar yun nahi aata
har ghadi hai alam baqia ka
har ghadi dil may shor e matam hai
ay baqia mujhe…

اے بقیہ مجھے تیرا غم ہے
اِس لئے تو یہ آنکھ پُر نم ہے

جب سے تیرا یہ انہدام ہوا
دل میں بس غم کا ہی قیام ہوا
اب تو اِک اضطرابِ پیہم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

قبرِ زہرا جو ڈھائی اعدا نے
کیا بگاڑا تھا اِن کا دکھیا نے
ہم تو جتنا بھی روئیں وہ کم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

ہے جو بے سایہ تربتِ سجاد
کیوں نہ ہم غمزدہ کریں فریاد
اِس سے بڑھ کر بھی کوئی کیا غم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

قبر باقر کی اور جعفر کی
ہے شکستہ جو قبر شبر کی
ہر طرف سوگ کا سا عالم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

کہہ اُٹھا دیکھ کر دلِ مضطر
ہائے رے قبرِ مادرِ حیدر
اِس کی توقیر تو مقدم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

جب بھی تشریف لائیں گے مہدی
ہو گا تعمیر پھر بقیہ بھی
مجھ کو اِک یہ ہی آس ہر دم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

کیوں نہ آوازِ حق اُٹھائیں ہم
کیسے باطل سے خوف کھائیں ہم
سر پہ جب باوفا کا پرچم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

جس نے زہرا کا دل دُکھایا ہے
اور اُنہیں عمر بھر رلایا ہے
اُس پہ لعنت ہی اب تو ہر دَم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔

چین اظہارؔ یوں نہیں آتا
ہر گھڑی ہے الم بقیہ کا
ہر گھڑی دل میں شورِ ماتم ہے
اے بقیہ مجھے۔۔۔