NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Amma mai jaa raha

Nohakhan: Sajjad Zaidi
Shayar: Gohar Jarchvi


amma mai jaa raha hoo deen e khuda bachane
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane

akbar mera karega nana ki tarjumani
dega khuda ke deen ko maqtal may naujawani
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

kehte hui ye sheh ki awaaz thar tharayi
de dunga raahe haq my abbas jaisa bhai
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

qasim ki laash ke bhi tukde uthaunga mai
baysheer ki lehad bhi ran may banaunga mai
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

meri behan jo mujhko hai jaan se bhi pyari
sun'ni hai us behan ki maqtal may aah o zaari
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

sar ko kataunga mai ghar ko lutaunga mai
nana se jo kiya hai waada nibhaunga mai
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

is tarha se karunga ayaat ki hifazat
naize pe bhi karunga quran ki tilawat
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

ye maa bhi chal rahi hai tere saath gham uthane
tu jaa raha hai beta karbobala basane
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

veraan hai madina veraan hai haveli
maa kya karegi dukhiya reh kar yahan akeli
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

din honge aafaton ke ghurbat ki raat hogi
is maut ke safar may maa saath saath hogi
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

maa saath saath pahunchi bete ka gham manane
aayi nazar ye dukhiya har laash ke sirhane
phir aaun ya na aaun wapas khuda hi jaane
amma mai jaa raha hoo…

اماں میں جا رہا ہوں دینِ خدا بچانے
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے

اکبر مرا کرے گا نانا کی ترجمانی
دے گا خدا کے دیں کو مقتل میں نوجوانی
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

کہتے ہوئے یہ شہہ کی آواز تھرتھرائی
دے دوں گا راہِ حق میں عباس جیسا بھائی
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

قاسم کی لاش کے بھی ٹکڑے اُٹھائوں گا میں
بے شیر کی لحد بھی رن میں بنائوں گا میں
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

میری بہن جو مجھ کو ہے جان سے بھی پیاری
سننی ہے اُس بہن کی مقتل میں آہ و زاری
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

سر کو کٹائوں گا میں گھر کو لٹائوں گا میں
نانا سے جو کیا ہے وعدہ نبھائوں گا میں
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

اِس طرح سے کروں گا آیات کی حفاظت
نیزے پہ بھی کروں گا قرآن کی تلاوت
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

یہ ماں بھی چل رہی ہے ترے ساتھ غم اُٹھانے
تو جا رہا ہے بیٹا کرب و بلا بسانے
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

ویران ہے مدینہ ویران ہے حویلی
ماں کیا کرے گی دکھیا رہ کر یہاں اکیلی
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

دن ہوں گے آفتوں کے غربت کی رات ہو گی
اِس موت کے سفر میں ماں ساتھ ساتھ ہو گی
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔

ماں ساتھ ساتھ پہنچی بیٹے کا غم بٹانے
آئی نظر یہ دکھیا ہر لاشے کے سِرہانے
پھر آئوں یا نہ آئوں واپس خدا ہی جانے
اماں میں جا رہا ہوں۔۔۔