NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Alam ghazi ka

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Gohar Jarchvi


baatil ka dam ghut'ta hai
ye jab bhi kahin uth'ta hai
alam ghazi ka alam ghazi ka

ejaaz e atash dikhlata hai
mafhoome ata samjhata hai
ek mashk liye ye aata hai
aur abre karam barsata hai
jab lutf o karam karta hai
har jholi ko bharta hai
alam ghazi ka...

roshan hai charaagh e haq jis se
wo iske pharere ki hai hawa
abbas se nisbat hai isko
har sar pe isi ke taaj e wafa
taufeeq e aza deta hai
paighame wafa deta hai
alam ghazi ka...

hairaan hai yusuf bhi jis par
paayi ha jawani bhi aisi
waliyon ki tarha ye chalta hai
khaamat hai farishton ki jaisi
jab majlis may aata hai
kaunain pe cha jaata hai
alam ghazi ka...

ghazi ne wafa ke jalwon se
is tarha sajaya hai ye alam
taqreeb e halaf bardari may
waliyon ne uthaya hai ye alam
paymana e salaari hai
minaar e wafadari hai
alam ghazi ka...

jo haazir hona chaahte hai
darbar e imamat may dil se
nazdeek bulata hai unko
panje se ishare kar kar ke
manzil ki khabar deta hai
khud zaade safar deta hai
alam ghazi ka...

jab waqt kada aa jaata hai
shabbir ke ghamkharon ke liye
sheron ki tarha se uth'ta hai
maula ke azadaron ke liye
aandhi se ulajh padta hai
toofano se ladta hai
alam ghazi ka...

tareekh gawahi deti hai
koi saani nahi is parcham ka
zinda hai agar beenayi teri
ay munkir ghaur se dekh zara
sab jhande hogaye thande
uncha hai khuda ke bande
alam ghazi ka...

allah re iska jaah o hasham
chauda sau baras ka hai ye alam
na ispe zaeefi aayi hai
na iski kamar may aaya hai kham
azmat ka nishan hai gohar
sadiyon se jawan hai gohar
alam ghazi ka...

باطل کا دَم گھٹتا ہے
یہ جب بھی کہیں اُٹھتا ہے
علم غازی کا علم غازی کا

اعجازِ عطش دکھلاتا ہے
مفہومِ عطا سمجھاتا ہے
اِک مشک لئے یہ آتا ہے
اور ابرِ کرم برساتا ہے
جب لطف و کرم کرتا ہے
ہر جھولی کو بھرتا ہے
علم غازی کا۔۔۔

روشن ہے چراغِ حق جس سے
وہ اس کے پھریرے کی ہے ہوا
عباس سے نسبت ہے اس کو
ہے سر پہ اسی کے تاجِ و فا
توفیقِ عزا دیتا ہے
پیغام وفا دیتا ہے
علم غازی کا۔۔۔

حیران ہیں یوسف بھی جس پر
پائی ہے جوانی بھی ایسی
ولیوں کی طرح یہ چلتا ہے
قامت ہے فرشتوں کے جیسی
جب مجلس میں آتا ہے
کونین پہ چھا جاتا ہے
علم غازی کا۔۔۔

غازی نے وفا کے جلوئوں سے
اس طرح سجایا ہے یہ علم
تقریبِ حلف برداری میں
ولیوں نے اٹھایا ہے یہ علم
پیمانہِ سالاری ہے
مینارِ وفاداری ہے
علم غازی کا۔۔۔

جو حاضر ہونا چاہتے ہیں
دربارِ امامت میں دل سے
نزدیک بلاتا ہے ان کو
پنجے سے اشارے کر کر کے
منزل کی خبر دیتا ہے
خود زادِ سفر دیتا ہے
علم غازی کا۔۔۔

جب وقت کڑا آجاتا ہے
شبیر کے غمخواروں کے لئے
شیروں کی طرح سے اٹھتا ہے
مولا کے عزاداروں کے لئے
آندھی سے الجھ پڑتا ہے
طوفانوں سے لڑتا ہے
علم غازی کا۔۔۔

تاریخ گواہی دیتی ہے
کوئی ثانی نہیں اس پرچم کا
زندہ ہے اگر بینائی تیری
اے منکر غور سے دیکھ ذرا
سب جھنڈے ہو گئے ٹھنڈے
اونچا ہے خدا کے بندے
علم غازی کا۔۔۔

اللہ رے اس کا جاہ و حشم
چودہ سو برس کا ہے یہ علم
نہ اس پہ ضعیفی آئی ہے
نہ اس کی کمر میں آیا ہے خم
عظمت کا نشاں ہے گوہر
صدیوں سے جواں ہے گوہر
علم غازی کا۔۔۔