NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aisa musafir na ayega

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


mehman tera pyasa raha sookha gala kaata gaya
ay dashte karbala ay dashte karbala

bete shaheed ho gaye bhai juda hua
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

laashein utha utha ke kamar choor hogayi
jeene ki arzoo to bahot door ho gayi
akbar shaheed ho gaya mai sochta raha
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

baazu kata ke nehr pe abbas so gaya
hasrat se ahlebait ko mai dekhta raha
ab mere baad meri sakina ka hoga kya
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

ansaar e bawafa mere mujh par fida huye
tayghon ke moo ko unke galay choomte rahe
ek shab ka mehman tha hurr wo bhi mar gaya
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

qasim ki maut meri ghareebi pe royi hai
daulat hassan ki maine bayaban may khoyi hai
qasim kahan hai dasht may mai dhoondta raha
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

pyare thay mujhko jaan se zaianb ke laadle
wo aediyan ragad ke mera dil dukha gaye
laashon pe unki haye mai tanha khada raha
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

allah jaanta hai jo dil par guzar gayi
asghar ke baad jeene ki taaqat nahi rahi
wo phool mere haath pe murjha ke reh gaya
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

ek ek karke monis o yawar guzar gaye
jeete thay jinko dekh ke wo laal mar gaye
karta sawaar jo mujhe baaqi koi na tha
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

jab zeen se zamaan pe ya-rab gira tha mai
amma mere sirhane thi ghash may pada tha mai
khanjar layeen galay pe mere phayrne laga
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

rehaan shaah e deen ne kaha rab e zuljalaal
zaahir hai tujhpe aale mohamed ka saara haal
jibreel hai gawah sar e maqtal e jafa
humse kisi ne ye bhi na poocha ke kya hua
aisa ghareeb aisa musafir na aayega
ay dashte karbala...

مہماں تیرا پیاسا رہا سوکھا گلا کاٹا گیا
اے دشتِ کربلا اے دشتِ کربلا

بیٹے شہید ہوگۓ بھای جدا ہوا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

لاشیں اٹھا اٹھا کے کمر چور ہوگیء
جینے کی آرزو تو بہت دور ہو گیء
اکبر شہید ہوگۓ میں سوچتا رہا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

بازو کٹا کے نہر پہ عباس سو گےء
حسرت سے اہلبیت کو میں دیکھتا رہا
اب میرے بعد میری سکینہ کا ہوگا کیا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

انصار با وفا میرے مجھ پر فدا ہوے
تیغوں کے منہ کو انکے گلے چومتے رہے
اک شب کا میہمان تھا حر وہ بھی مر گیا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

قاسم کی موت میری غریبی پہ روی ہے
دولت حسن کی میں نے بیاباں میں کھوی ہے
قاسم کہاں ہے دشت میں میں ڈھونڈتا رہا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

پیارے تھے مجھکو جان سے زینب کے لاڈلے
وہ ایڑیاں رگڑ کے میرا دل دکھا گےء
لاشوں پہ انکی ہاے میں تنہا کھڑا‌ رہا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

اللّٰہ جانتا ہے جو دل پر گزر گیء
اصغر کے بعد جینے کی طاقت نہیں رہی
وہ پھول میرے ہاتھ پہ مرجھا کے رہ گیا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

ایک اک کر کے مونس و یاور گزر گےء
جیتے تھے جن کو دیکھ کے وہ لال مر گےء
کرتا سوار جو مجھے باقی کوئی نہ تھا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔

جب زین سے زمین پہ یارب گرا تھا میں
اماں میرے سرہانے تھی غش میں پڑا تھا میں
خنجر لعیں گلے پہ میرے پھیرنے لگا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔
ریحان شاہ دیں نے کہا رب ذوالجلال
ظاہر ہے تجھ پہ آل محمّد کا سارا حال
جبریل ہیں گواہ سر مقتل جفا
ہم سے کسی نے یہ بھی نہ پوچھا کہ کیا ہوا
ایسا غریب ایسا مسافر نہ آے گا
اے دشتِ کربلا۔۔۔