NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas mar gaya

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Ali Izhaar


qaime may aaye maqtal e ghazi se jab hussain
khaali alam uthaye thay aur thay zaban pe bayn
zainab ne jab ye poocha wo hyder ka noor e ain
aaya na ghar ko laut ke kyun mere dil ka chain

rote hue hussain ne zainab se ye kaha
abbas mar gaya
hamsheer ab badhado alam apne bhai ka
abbas mar gaya

saansein ukhar rahi thi jawan mere bhai ki
bedast tha jari
meri nazar ke saamne jaan se guzar gaya
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

behta tha khoon aankh may paywast teer tha
manzar tha dard ka
zainab hamare bhai pe itni hui jafa
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

har khatra aab ka usay pyara tha jaan se
maqtal may is liye
lagte hi teer mashk pe pani juhin baha
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

boli sakina bachon ke honton pe pyas hai
mujhse hi aas hai
mai unko kis tarha se bataun mera chacha
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

akbar kahan ho baap ko aa kar sambhaal lo
mushkil may saath do
sarwar ka ab koi bhi sahara nahi raha
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

ab baade asr kaun hai qaimon ka paasban
mehshar ka hai samaa
ghabrayi binte fatema jab shor ye utha
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

sarwar ki baat kaise bhala taal'ta jari
khaahish thi shaah ki
par bhai kehke hogaya khamosh bawafa
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

izhaar ho ke ghamzada farmate thay hussain
loota gaya hai chain
ab andhiyon ki zad pe hai zainab teri rida
abbas mar gaya
rote hue hussain ne…

خیمے میں آے مقتل غازی سے جب حسین
خالی الم اٹھاے تھے اور تھے زباں پہ بین
زینب نے جب یہ پوچھا وہ حیدر کا نور عین
آیا نہ گھر کو لوٹ کے کیوں میرے دل کا چین

روتے ہوئے حسین نے زینب سے یہ کہا
عباس مرگیا
ہمشیر اب بڑھا دو علم اپنے بھائی کا
عباس مرگیا

سانسیں اکھڑ رہی تھیں جواں میرے بھائی کی
بے دست تھا جری
میری نظر کے سامنے جاں سے گزر گیا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

بہتا تھا خون آنکھ میں پیوست تیر تھا
منظر تھا درد کا
زینب ہمارے بھائی پہ اتنی ہوئی جفا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

ہر قطرہ آب کا اُسے پیارا تھا جان سے
مقتل میں اس لئے
لگتے ہی تیر مشک پہ پانی جونہی بہا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

بولی سکینہ بچوں کے ہونٹوں پہ پیاس ہے
مجھ سے ہی آس ہے
میں ان کو کس طرح سے بتاؤں میرا چچا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

اکبر کہاں ہو باپ کو آکر سنبھال لو
مشکل میں ساتھ دو
سرور کا اب کوئی بھی سہارا نہیں رہا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

اب بعدِ عصر کون ہے خیموں کا پاسباں
محشر کا ہے سماں
گھبرائی بنتِ فاطمہ جب شور یہ اٹھا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

سرور کی بات کیسے بھلا ٹالتا جری
خواہش تھی شاہ کی
پر بھائی کہہ کے ہو گیا خاموش باوفا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔

اظہارؔ ہو کے غمزدہ فرماتے تھے حُسین
لُوٹا گیا ہے چَین
اب آندھیوں کی زَد پہ ہے زینب تیری ردا
عباس مرگیا
روتے ہوئے حسین نے۔۔۔