NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas ki behnein

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Mazhar Naqvi


kha gaya sehzadiyon ko gham isi ehsaas ka
haye tha rehwaar ki gardan may sar abbas ka

kahan na-paak nazrein aur kahan abbas ki behnein
pareshan hai ali ki betiyan abbas ki behnein

isi khaatir tha sar rehwaar ki gardan may ghazi ka
ke dekhe na sare noke sina abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

aseeri be-ridayi shaam ke bazaar ka aalam
na jaane degi kitne imtehan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

khadi hai baab e sa'at par na jaane kitne pehron se
musalmano tumhare darmiyan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

tilawat kar rahi hai khoon may doobi hui aankhein
sunengi kaise nange sar azaan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

khajoorein phaynkte hai log sadqe ki aseeron pe
kare kis se musibat ye bayan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

khadi hai sar chupaye patharon ki tez baarish may
shaheedon ke saron ke darmiyan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

khule sar jis najis maahol se ho aayi logon
rahengi ab sada girya kuna abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

chali hai maarka sar shaam ka karne ghareebi may
bandhaye baazuon may rassiyan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

dikha kar neel boli betiyan zehra ke markhad par
ujad ke aayi hai ghar dekh maa abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

chupayengi bhala ab maadar e abbas se kaise
ye durron ki azziyat ke nishan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

bayan rizwan o mazhar ho nahi sakti qayamat tak
ghamon ki hai mujassam daastan abbas ki behnein
kahan na-paak nazrein...

کھا گیا شہزادیوں کو غم اسی احساس کا
ہاے تھا رہوار کی گردن میں سر عباس کا

کہاں ناپاک نظریں اور کہاں عباس کی بہنیں
پریشاں ہے علی کی بیٹیاں عباس کی بہنیں

اسی خاطر تھا سر رہوار کی گردن میں غازی کا
کہ دیکھے نہ سر نوکِ سِناں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

اسیری بے ردائی شام کے بازار کا عالم
نہ جانے دیگی کتنے امتحان عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

کھڑی ہے باب ساعت پر نہ جانے کتنے پہروں سے
مسلمانوں تمہارے درمیاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

تلاوت کر رہی ہے خون میں ڈوبی ہوی آنکھیں
سنے گی کیسے ننگے سر اذاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

کھجوریں پھینکتے ہیں لوگ صدقے کی اسیروں پہ
کرے کس سے مصیبت یہ بیاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

کھڑی ہے سر چھپاے پتھروں کی تیز بارش میں
شہیدوں کے سروں کے درمیاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

کھلے سر جس نجس ماحول سے ہو آی لوگوں
رہیں گی اب صدا گریہ کناں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

چلی ہے معرکہ سر شام کا کرنے غریبی میں
بندھاے بازوؤں میں رسیاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

دکھا کر نیل بولی بیٹیاں زہرا کے مرقد پر
اجڑ کے آی ہے گھر دیکھ ماں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

چھپاےنگے بھلا اب مادر عباس سے کیسے
یہ دروں کی اذیت کے نشاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔

بیاں رضوان و مظہر ہو نہیں سکتی قیامت تک
غموں کی ہے مجسم داستاں عباس کی بہنیں
کہاں ناپاک نظریں۔۔۔