NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aakhri raat soja

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Zafar Abbas


sakina se kehte thay maqtal may sarwar
hai ye aakhri raat soja sakina

meri zindagi may bhi aaram karle
abhi to mayassar hai baba ka seena

ay jaan e padar mujhko maloom hai ye
tuhje kal se be-dard sone na denge
meri laash e pamaal par bhi sakina
tujhe ye sitamgaar rone na denge
tu jee bhar ke mujhse mulaqat karle
yehi chand lamhe hai meri hazeena
sakina se kehte thay...

tujhe is liye hi to maanga tha maine
shabon ki namazon may apne khuda se
ke meri mohabbat ka jab imtehan ho
judaai teri mai sahun karbala se
karun sabr teri yateemi pe mai bhi
kare sabr maqtal may tu bhi sakina
sakina se kehte thay...

ye raunaq bhi kal shaam tak hai sakina
ke bad jayegi teri tashna dahani
tera bhai asghar to pyasa rahega
dikha kar tujhe shimr phekega pani
meri tashnagi yaad karlena beta
ke raahon may jab bhi kabhi pani peena
sakina se kehte thay...

safar ki thaki hai kuch aaram kar le
ay shehzadi ye raat dhalne se pehle
ye seena bhi pamaal hojayega kal
katega gala dam nikalne se pehle
mujhe be-khata qatl hona hai ran may
meri laal ab mera mushkil hai jeena
sakina se kehte thay...

inhe ye khabar hai meri laadli hai
tujhe bhi satayenge ye shaam waale
tujhe zulm sehne hai in zaalimon ke
tujhe kar raha hoo khuda ke hawale
bahot mushkilein hongi ashoor ke din
musibat may ye ghir gaya hai safeena
sakina se kehte thay...

ghareeb ul watan ki yehi aarzoo hai
phupi ki tarha zulm par sabr karna
tujhe dekh kar log aansu bahaye
yateemi ko lekar jahan se guzarna
tujhe kufa o shaam ke raasta may
bahot yaad aayega shehr e madina
sakina se kehte thay...

zafar dayr tak shaah e deen aur sakina
shab e gham may karte rahe aah o zaari
wo baap aur beti ki ruqsat ka manzar
dil e karlbala par hai ye zakhm kaari
kahan shaah ki qabr karbobala may
kahan shaam may hai mazaar e sakina
sakina se kehte thay...

سکینہ سے کہتے تھے مقتل میں سرور
ہے یہ آخری رات سوجا سکینہ

مری زندگی میں ہی آرام کر لے
ابھی تو میسر ہے بابا کا سینہ

اے جانِ پدر مجھ کو معلوم ہے یہ
تجھے کل سے بے درد سونے نہ دیں گے
مری لاشِ پامال پر بھی سکینہ
تجھے یہ ستمگار رونے نہ دیں گے
توُ جی بھر کے مجھ سے ملاقات کر لے
یہی چند لمحے ہیں میری حَزینہ
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

تجھے اِس لیے ہی تو مانگا تھا میں نے
شبوں کی نمازوں میں اپنے خدا سے
کہ میری محبت کا جب امتحاں ہو
جدائی تری میں سہوں کربلا سے
کروں صبر تیری یتیمی پہ میں بھی
کرے صبر مقتل میں تو بھی سکینہ
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

یہ رونق بھی کل شام تک ہے سکینہ
کہ بڑھ جائے گی تیری تشنہ دہانی
ترا بھائی اصغر تو پیاسا رہے گا
دِکھا کر تجھے شمر پھینکے گا پانی
مری تشنگی یاد کر لینا بیٹا
کہ راہوں میں جب بھی کبھی پانی پینا
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

سفر کی تھکی ہے کچھ آرام کر لے
اے شہزادی یہ رات ڈھلنے سے پہلے
یہ سینہ بھی پامال ہو جائے گا کل
کٹے گا گلا دَم نکلنے سے پہلے
مجھے بے خطا قتل ہونا ہے رن میں
مری لعل اب میرا مشکل ہے جینا
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

اِنھیں یہ خبر ہے مری لاڈلی ہے
تجھے بھی ستائیں گے یہ شام والے
تجھے ظلم سہنے ہیں اِن ظالموں کے
تجھے کر رہا ہوں خدا کے حوالے
بہت مشکلیں ہوں گیں عاشور کے دن
مصیبت میں یہ گِھر گیا ہے سفینہ
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

غریب الوطن کی یہی آرزو ہے
پھوپھی کی طرح ظلم پر صبر کرنا
تجھے دیکھ کر لوگ آنسو بہائیں
یتیمی کو لے کر جہاں سے گزرنا
تجھے کوفہ و شام کے راستے میں
بہت یاد آئے گا شہرِ مدینہ
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔

ظفر دیر تک شاہِ دیں اور سکینہ
شبِ غم میں کرتے رہے آہ و زاری
وہ باپ اور بیٹی کی رخصت کا منظر
دلِ کربلا پر ہے یہ زخم کاری
کہاں شاہ کی قبر کرب و بلا میں
کہاں شام میں ہے مزارِ سکینہ
سکینہ سے کہتے تھے۔۔۔