NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bain karti thi ye

Nohakhan: Sachey Bhai


bain karti thi ye zainab ke bachao bhai
qaime jalte hai madad ke liye aao bhai

balwa e aam may beparda khadi hai zainab
binte zehra ko layeeno se bachao bhai
bain karti thi ye...

ghash may hai sayyede sajjad jale qaimon may
aake bemaar ko godhi may uthao bhai
bain karti thi ye...

tum to pehchan sakoge na hamari surat
apni surat hamay ek baar dikhao bhai
bain karti thi ye...

ab to akbar hai na qasim hai na bhai abbas
hai rasan basta haram inko chudao bhai
bain karti thi ye...

hai gala khushk sakina ka labon par dam hai
pani darya se isay laake pilao bhai
bain karti thi ye...

hichkiyan leke wo roti hai bulaati hai tumhe
apne seene pe sakina ko sulao bhai
bain karti thi ye...

qaid khane se ye zainab ki sada aati thi
apni beti ke janaze ko uthao bhai
bain karti thi ye...

بین کرتی تھی یہ زینب کہ بچاؤ بھای
خیمے جلتے ہیں مدد کے لئے آؤ بھای

بلوہء عام میں بے پردہ کھڑی ہے زینب
بنتِ زہرا کو لعینوں سے بچاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

غش میں ہیں سید سجاد جلے خیموں میں
آکے بیمار کو گودی میں اٹھاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

تم تو پہچان سکو گے نہ ہماری صورت
اپنی صورت ہمیں اک بار دکھاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

اب تو اکبر ہیں نہ قاسم ہے نہ بھای عباس
ہیں رسن بستہ حرم ان کو چھڑاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

ہے گلا خشک سکینہ کا لبوں پر دم ہے
پانی دریا سے اسے لاکے پلاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

ہچکیاں لے کے وہ روتی ہے بلاتی ہے تمہیں
اپنے سینے پہ سکینہ کو سلاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔

قید خانے سے یہ زینب کی صدا آتی تھی
اپنے بیٹی کے جنازے کو اٹھاؤ بھای
بین کرتی تھی یہ۔۔۔