NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas chale aao

Nohakhan: Sachey Bhai


abbas chale aao abbas

kya chain se sotay ho darya ke kanare par
chod aaye sakina ko ho kiske sahare par
dar par hai khadi kabse lagaye huwe wo aas
abbas abbas chale aao abbas

hai yun to shahe deen ne maqtal ki raza de di
kis tarha uthayenge mayyat ali akbar ki
bhai ki zaeefi ka zara kuch karo ehsaas
abbas abbas chale aao abbas

shabbir ki nazron may tareek zamana hai
uljha hua barchi may akbar ka kaleja hai
hamshakle nabi ka bhi udoo ne na kiya paas
abbas abbas chale aao abbas

qaimon may rawan har soo ek aag ka darya hai
aur pusht pe zainab ki bemaar bhatija hai
aulaad e payambar ka udoo ne na kiya paas
abbas abbas chale aao abbas

kuch tumko khabar bhi hai kya ye hai pata tumko
khaati thi tamache aur deti thi sada tumko
durron se bujhayi gayi masoom ki jab pyaas
abbas abbas chale aao abbas

sunte hai ke zainab ke baazu may rasan hogi
darbar e sitam hoga sar nange behan hogi
aankhon se lahoo royenge sajjad basad yaas
abbas abbas chale aao abbas

عباس چلے آؤ عباس

کیا چین سے سوتے ہو دریا کے کنارے پر
چھوڑ آے سکینہ کو ہو کس کے سہارے پر
در پر ہے کھڑی کب سے لگاے ہوے وہ آس
عباس عباس چلے آؤ عباس

ہے یوں تو شہ دین نے مقتل کی رضا دے دی
کس طرح اٹھاےنگے میت علی اکبر کی
بھای کی ضعیفی کا زرا کچھ کرو احساس
عباس عباس چلے آؤ عباس

شبیر کی نظروں میں تاریک زمانہ ہے
الجھا ہوا برچھی میں اکبر کا کلیجہ ہے
ہمشکل نبی کا بھی عدو نے نہ کیا پاس
عباس عباس چلے آؤ عباس

خیموں میں رواں ہر سوں اک آگ کا دریا ہے
اور پشت پہ زینب کی بیمار بھتیجا ہے
اولاد پیمبر کا عدو نے نہ کیا پاس
عباس عباس چلے آؤ عباس

کچھ تم کو خبر بھی ہے کیا یہ ہے پتہ تم کو
کھاتی تھی طمانچے اور دیتی تھی صدا تم کو
دروں سے بجھای گیء معصوم کی جب پیاس
عباس عباس چلے آؤ عباس

سنتے ہیں کہ زینب کے بازو میں رسن ہوگی
دربار ستم ہوگا سر ننگے بہن ہوگی
آنکھوں سے لہو روےنگے سجاد بصد یاس
عباس عباس چلے آؤ عباس