NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Dekha jab baap ka

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Sajjad Mir


dekha jab baap ka laasha to sakina royi
shimr ne maara jo durra to sakina royi

na mila pani usay aag bujhane ke liye
jal gaya bhai ka jhoola to sakina royi
dekha jab baap ka...

od kar sar pe rida kaan may durr pehne huwe
saamne aayi jo ramla to sakina royi
dekha jab baap ka...

maar kar sayyed e mazloom ke honton pe chadi
jab hasa haakim e kufa to sakina royi
dekha jab baap ka...

kya sakina ho tumhi itna batado bibi
hind ne aa ke jo poocha to sakina royi
dekha jab baap ka...

chaahti thi ke wo le aaye usay qaime may
baap ka laasha na utha to sakina royi
dekha jab baap ka...

qaid may sunte huwe baap ke sar se lori
zakhmi honton ko jo dekha to sakina royi
dekha jab baap ka...

mir sajjad wo naaqe se giri royi nahi
aa ke daadi ne uthaya to sakina royi
dekha jab baap ka...

دیکھا جب باپ کا لاشہ تو سکینہ روی
شمر نے مارا جو درہ تو سکینہ روی

نہ ملا پانی اسے آگ بجھانے کے لئے
جل گیا بھای کا جھولا تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

اوڑھ کر سر پہ ردا کان میں در پہنے ہوے
سامنے آی جو رملہ تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

مار کر سیدے مظلوم کے ہونٹوں پہ چھڑی
جب ہنسا حاکم کوفہ تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

کیا سکینہ ہو تمہیں اتنا بتادو بی بی
ہند نے آ کے جو پوچھا تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

چاہتی تھی کہ وہ لے آے اسے خیمے میں
باپ کا لاشہ نہ اٹھا تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

قید میں سنتے ہوئے باپ کے سر سے لوری
زخمی ہونٹوں کو جو دیکھا تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔

میر سجاد وہ ناقے سے گری روی نہیں
آ کے دادی نے اٹھایا تو سکینہ روی
دیکھا جب باپ کا۔۔۔