NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bin baazuon ke utra

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Hasnain Akbar


kulsoom ro ke kehti hai ummul baneen se
bin baazuon ke utra hai abbas zeen se

umeed pyase bachon ki mujhse judi rahe
wo chaahta tha mashke sakina bachi rahe
yun teer rokta raha apni jabeen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

baba ka zakhm yaad hai gehra tha kis khadar
aise hi tha do neem mere bawafa ka sar
hyder ki tarha khoon tha jaari jabeen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

ek aankh may tha teer to ek aankh may lahoo
qaime ki raah dhoond raha tha wo char soo
ek gurz ne gira diya bekas ko zeen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

roohe ali ke bain thay haye mera safeer
sar par bhi gurz baazu juda aankh may bhi teer
badla mera liya hai mere janasheen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

saqqa haram ka dasht may be-jaan hogaya
ab maarna hussain ko aasaan hogaya
ye shor uth raha tha sipaahe layeen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

ghazi ki maut haal ye zainab ka kar gayi
lagta tha jaise saani e zehra bhi mar gayi
aise giri wo jaise gira bhai zeen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

amma mai apne bete ka matam na kar saki
hadh ye hai qaid hoke mai jab shaam ko chali
baazu utha ke choom na paayi zameen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

akbar behan ye boli ghazab ki jafa hui
asghar ke jaisi laash mere bhai ki bachi
abid ne uske tukde chune hai zameen se
bin baazuon ke utra hai..
kulsoom ro ke kehti hai...

کلثوم رو کے کہتی ہے ام البنین سے
بن بازوؤں کے اترا ہے عباس زین سے

امید پیاسے بچوں کی مجھے جڑی رہے
وہ چاہتا تھا مشک سکینہ بچی رہے
یوں تیر روکتا رہا اپنی جبین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

بابا کا زخم یاد ہے گہرا تھا کس قدر
ایسے ہی تھا دو نیم میرے باوفا کا سر
حیدر کی طرح خون تھا جاری جبین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

اک آنکھ میں تھا تیر تو اک آنکھ میں لہو
خیمے کی راہ ڈھونڈ رہا تھا وہ چار سو
اک گرز نے گرا دیا بے کس کو زین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

روح علی کے بین تھے ہاے میرا سفیر
سر پر بھی گرز بازو جدا آنکھ میں بھی تیر
بدلہ میرا لیا ہے میرے جانشین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

سقہ حرم کا دشت میں بے جان ہوگیا
اب مارنا حسین کو آسان ہوگیا
یہ شور اٹھ رہا تھا سپاہ لعین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

غازی کی موت حال یہ زینب کا کر گیء
لگتا تھا جیسے ثانیء زہرا بھی مر گیء
ایسے گری وہ جیسے گرا بھای زین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

اماں میں اپنے بیٹے کا ماتم نہ کر سکیں
حد یہ ہے قید ہوکے میں جب شام کو چلی
بازو اٹھا کے چوم نہ پای زمین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔

اکبر بہن یہ بولی غضب کی جفا ہوی
اصغر کے جیسی لاش میرے بھای کی بچی
عابد نے اس کے ٹکڑے چنے ہیں زمین سے
بن بازوؤں کے اترا۔۔۔
کلثوم رو کے کہتی ہے۔۔۔