NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bhai ka laasha

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


dushman ko bhi na bhai ka matam khuda dikhaye
logon batao bhai ko bhai kahan se laaye

bhai ko khuda bhai ka laasha na dikhaye
bhai ko khuda bhai...
laashe pe alamdar ke sheh kehte thay haye
bhai ko khuda bhai...

kya saani e zehra ko mai batlaunga bhaiya
mai laash se uthkar to nahi jaunga bhaiya
ab shimr yahin aake churi mujhpe chalaye
bhai ko khuda bhai...

phat jayega gham se mera dil thaam lo abbas
ab dayr bahot ho gayi ghar ko chalo abbas
aisa na ho maqtal may sakina chali aaye
bhai ko khuda bhai...

ab haaton may larza hai kahan jaan rahi hai
mazloom ki ghurbat may kamar toot gayi hai
ya rab kisi dushman pe bhi ye waqt na aaye

ho gaya marna sitam abbas ka
abbas pani lao abbas pani lao

haaton may khaali kooze bache liye huwe hai
ghirde sakina dekho halqa kiye huwe hai
bache na jaane kab ka pani piye huwe hai
bin aab mar na jaye pani inhe pilao
abbas abbas abbas pani lao abbas pani lao
bhai ko khuda bhai...

pehlu may sada maine bithaya tumhe bhai
jis bhai ne godi may uthaya tumhe bhai
wo bhai bhala kaise teri laash uthaye
bhai ko khuda bhai...

maa behne hai hamshakle payambar ke hawale
mai mashk o alam karta hoo akbar ke hawale
himmat nahi shabbir may jo qaimon may jaye
bhai ko khuda bhai...

sadaat hai ye shaam ke lashkar ko batao
jaate huwe ye shimr se kehte huwe jao
wo meri sakina ko tamache na lagaye

toot gayi aas meri toot gayi aas
in shab shabe matame hussaina
laachar laachar laachar hussaina

dayr hui mere chacha jaan ko sidhare
akbar o baba hai gaye nehr kanare
amma mera qalb jala pyaas ke maare
toot'te jaate hai mere dil ke sahare
toot gayi aas meri toot gayi aas
bhai ko khuda bhai...

akbar ko abhi jaane do humne to kaha tha
aulaad to mil jaati hai bhai nahi milta
shabbir kahan se tumhe ab dhoond ke laaye
bhai ko khuda bhai...

sadaat ye kehte hai ke hum pyase rahenge
tum ne na piya pani to hum bhi na piyenge
allah hamay pyasa hi dunya se uthaye
bhai ko khuda bhai...

mud mud ke takay jaate thay abbas ka laasha
girte kabhi uth'te thay takallum shahe waala
akbar badi mushkil se sambhale huwe aaye
bhai ko khuda bhai...

دشمن کو بھی نہ بھای کا ماتم خدا دکھاے
لوگوں بتاؤ بھای کو بھای کہاں سے لاے

بھای کو خدا بھای کا لاشہ دکھاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔
لاشے پہ نہ علمدار کے شہ کہتے تھے ہاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

کیا ثانیء زہرا کو میں بتلاؤں گا بھیا
میں لاش سے اٹھ کر تو نہیں جاؤں گا بھیا
اب شمر یہی آکے چھری مجھ پہ چلاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

پھٹ جائےگا غم سے میرا دل تھام لو عباس
اب دیر بہت ہو گیء گھر کو چلو عباس
ایسا نہ مقتل میں سکینہ چلی آے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

اب ہاتھوں میں لرزا ہے کہاں جان رہی ہے
مظلوم کی غربت میں کمر ٹوٹ گیء ہے
یا رب کسی دشمن پہ بھی یہ وقت نہ آے

ہو گیا مرنا ستم عباس کا
عباس پانی لاؤ عباس پانی لاؤ

ہاتھوں میں خالی کوزے بچے لیے ہوے ہیں
گردے سکینہ دیکھو حلق کیے ہوے ہیں
بچے نہ جانے کب کا پانی پیے ہوے ہیں
بن آب مر نہ جاے پانی انہیں پلاؤ
عباس عباس عباس پانی لاؤ عباس پانی لاؤ
بھای کو خدا بھای۔۔۔

پہلو میں سدا میں نے بٹھایا تمہیں بھای
جس بھای نے گودی میں اٹھایا تمہیں بھای
وہ بھای بھلا کیسے تیری لاش اٹھاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

ماں بہنیں ہے ہمشکل پیمبر کے حوالے
میں مشک و الم کرتا ہوں اکبر کے حوالے
ہمت نہیں شبیر میں جو خیموں میں جاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

سادات ہے یہ شام کے لشکر کو بتاؤ
جاتے ہوے یہ شمر سے کہتے ہوے جاؤ
وہ میری سکینہ کو طمانچے نہ لگاے

ٹوٹ گیء آس میری ٹوٹ گیء آس
ان شب شب ماتم حسینا
لاچار لاچار لاچار حسینا

دیر ہوی میرے چچا جاں کو سدھارے
اکبر و بابا ہے گےء نہر کنارے
اماں میرا قلب جلا پیاس کے مارے
ٹوٹتے جاتے ہیں میرے دل کے سہارے
ٹوٹ گیء آس میری ٹوٹ گیء آس
بھای کو خدا بھای۔۔۔

اکبر کو ابھی جانے دو ہم نے تو کہا تھا
اولاد تو مل جاتی ہے بھای نہیں ملتا
شبیر کہاں سے تمہیں اب ڈھونڈ کے لاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

سادات یہ کہتے ہیں کہ ہم نے پیاسے رہیں گے
تم نے نہ پیا پانی تو ہم بھی نہ پیے نگے
اللّٰہ ہمیں پیاسا ہی دنیا سے اٹھاے
بھای کو خدا بھای۔۔۔

مڑ مڑ کے تکے جاتے تھے عباس کا لاشہ
گرتے کبھی اٹھتے تھے تکلم شہ والا
اکبر بڑی مشکل سے سنبھالے ہوے آے
بھای کو خدا بھای۔۔۔