NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay mere bhai raza

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


ay ghareebul ghurba ay mere bhai raza
roke masooma e qum qum se deti hai sada
ay mere bhai raza

tera deedar nahi bhai qismat may meri
de hawaon ko zara hukm ay mere ali
sunloo awaaz teri dil behel jaye mera
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

dekhne aayi hoo mai qum may surat teri
ay ghareebul ghuraba dekh ghurbat meri
koi batlaata nahi mujhko mashad ka pata
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

mujhpe jo beet gaye wo alam kuch bhi nahi
saamne zainab ke mere gham kuch bhi nahi
mai na bazaar gayi na chini meri rida
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

jab se pahunchi hoo mai qum dil hai kaabu may kahan
gham zada aaye nazar shehr ke peer o jawan
dekh kar kaale alam dil dehelta hai mera
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

hoo yateema lekin wo yateema to nahi
qaidi baba ki qasam mai sakina to nahi
jis ke gohar bhi chine jiska daaman bhi jala
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

kis jagah khaar chubhe kis jagah thak ke giri
poocho chaalon se zara kaise meelo mai chali
zakhm pairon ke tumhe gham sunayenge mera
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

ssath jayega mere ye gham e tanhaai
tum bhi akbar ki tarha nahi laute bhai
roz sughra ki tarha mai jalaati hoo diya
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

qum se mashad jo gaya zaair e maula raza
ay takallum wo yehi leke paigham chala
raasta teri behen ab bhi takti hai tera
ay mere bhai raza
ay ghareebul ghurba...

اے غریب الغربا اے میرے بھای رضا
روکے معصومہء قم قم سے دیتی ہے صدا
اے میرے بھای رضا

تیرے دیدار نہیں بھای قسمت میں میری
دے ہواؤں کو زرا حکم اے میرے علی
سن لوں آواز تیری دل بہل جاے میرا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

دیکھنے آی ہوں میں قم سے صورت تیری
اے غریب الغربا دیکھ غربت میری
کوئی بتلاتا نہیں مجھکو مشہد کا پتہ
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

مجھ پہ جو بیت گےء وہ الم کچھ بھی نہیں
سامنے زینب کے میرے غم کچھ بھی نہیں
میں نہ بازار گیء نہ چھنی میری ردا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

جب سے پہنچی ہوں میں قم دل ہے قابو میں کہاں
غم زدہ آے نظر شہر کے پیر و جواں
دیکھ کر کالے الم دل دہلتا ہے میرا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

ہوں یتیمہ لیکن وہ یتیمہ تو نہیں
قیدی بابا کی قسم میں سکینہ تو نہیں
جس کے گوہر بھی چھنے جس کا دامن بھی جلا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

کس جگہ خار چبھے کس جگہ تھک کے گری
پوچھو چھالوں سے زرا کیسے میلوں میں چلی
زخم پیروں کے تمہیں غم سناے نگے میرا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

ساتھ جاے گا میرے یہ غم تنہائی
تم بھی اکبر کی طرح نہیں لوٹے بھای
روز صغرا کی طرح میں جلاتی ہوں دیا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔

قم سے مشہد جو گیا زایر مولا رضا
اے تکلم وہ یہی لے کے پیغمبر چلا
راستہ تیری بہن اب بھی تکتی ہے تیرا
اے میرے بھای رضا
اے غریب الغربا۔۔۔