NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay mere bezaban

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


haye asghar mere asghar
ay raaj dulare asghar
maa tujhko pukare asghar
meri aankh ke taare asghar
aaja mere pyare asghar

ay mere bezaban tum reh gaye kahan
asghar jiyegi kaise tere baghair maa

chehra wo chand jaisa kaise bhulaye maa
asghar jiyegi kaise tere baghair maa

kya waqt aagaya hai bano ki bekasi par
ghurbat pe teri matam kaise karegi ki maadar
aada ne bandh di hai haathon may rassiyan
asghar jiyegi kaise...

himmat pe maa tumhari qurban kyun na jaaye
sunti hoo teer khaakar tum ran may muskuraye
maadar ki laaj rakh li shabaash meri jaan
asghar jiyegi kaise...

maadar ki hai wasiyat beta khayaal rakhna
godhi may inki asghar jaane ki zid na karna
pehle hi hai shikasta dadi ki phasliyan
asghar jiyegi kaise...

kya zer e khaak ab bhi soye ho moo chupaye
maa saari bibiyon se sharminda ho na jaaye
har ek shaheed ka hai sar bar sare sina
asghar jiyegi kaise...

dushwaar hogaya hai gham may tumhare jeena
ab khaali godh jaa kar maa kya kare madina
mujhko wahin bulalo ay laal ho jahan
asghar jiyegi kaise...

saansein to chal rahi hai zinda kahan rahi hai
maa zindagi se apni azaadi chaahti hai
mushkil kusha ho tum bhi khulwado bediyan
asghar jiyegi kaise...

jangal may ek beta awaaz goonjti hai
ye soch kar bhi maadar maqtal may ro rahi hai
lagta hai dard se tum lete ho siskiyan
asghar jiyegi kaise...

ye ujdi godh beta kaise sukoon paaye
haalat pe teri maa ki haste hai shaam waale
daaman may hai tumhare jhoole ki lakdiyan
asghar jiyegi kaise...

rote thay sab takallum ek maa ne jab kaha tha
paigham karbala may jaa kar hawa ye dena
zindan ke dar pe ab bhi baithi hai ek maa
asghar jiyegi kaise...

ہاے اصغر میرے اصغر
اے راج دلارے اصغر
ماں تجھکو پکارے اصغر
میری آنکھ کے تارے اصغر
آجا میرے پیارے اصغر

اے میرے بے زبان تم رہ گئے کہاں
اصغر جیےءگی کیسے تیرے بغیر ماں

چہرہ وہ چاند جیسا کیسے بھلاے ماں
اصغر جیےءگی کیسے تیرے بغیر ماں

کیا وقت آگیا ہے بانو کی بے کسی پر
غربت پہ تیری ماتم کیسے کرے گی کی مادر
اعدا نے باندھ دی ہے ہاتھوں میں رسیاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

ہمت پہ ماں تمہاری قربان کیوں نہ جاے
سنتی ہوں تیر کھاکر تم رن میں مسکراے
مادر کی لاج رکھ لی شاہباش میری جان
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

مادر کی ہے وصیتبیٹا خیال رکھنا
گودی میں انکی اصغر جانے کی ضد نہ کرنا
پہلے ہی ہے شکستہ دادی کی پسلیاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

کیا زیرِ خاک اب بھی سوے ہو منہ چھپائے
ماں ساری بی بیوں سے شرمندہ ہو نہ جاے
ہر ایک شہید کا ہے سر بر سرِ سناں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

دشوار ہوگیا ہے غم میں تمہارے جینا
اب خالی گود جا کر ماں کیا کرے مدینہ
مجھکو وہی بلالو اے لال ہو جہاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

سانسیں تو چل رہی ہے زندہ کہاں رہی ہے
ماں زندگی سے اپنی آزادی چاہتی ہے
مشکل کشا ہو تم بھی کھلوادو بیڑیاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

جنگل میں ایک بیٹا آواز گونجتی ہے
یہ سونچ کر بھی مادر مقتل میں رو رہی ہے
لگتا ہے درد سے تم لیتے ہو سسکیاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

یہ اجڑی گود بیٹا کیسے سکون پاے
حالت پہ تیری ماں کی ہنستے ہیں شام والے
دامن میں ہیں تمہارے جھولے کی لکڑیاں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔

روتے تھے سب تکلم اک ماں نے جب کہا تھا
پیغام کربلا میں جا کر ہوا یہ دینا
زنداں کے پہ اب بھی بیٹھی ہے ایک ماں
اصغر جیےءگی کیسے۔۔۔