NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay jaun bhai ho tum

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Sajjad Mir


ay jaun bhai ho tum mere
abbas ki qasam tumhe lag jao na galay

baba bhi aaye hai mere nana bhi aaye hai
chehre ka noor dekhne musa bhi aaye hai
yusuf khade huye hai ziyarat ke waaste
ay jaun bhai ho...

tujhko duayein aaj se degi dua e noor
khushboo tere paseene ki phaylegi door door
mil jayega lahoo tera khoone hussain se
ay jaun bhai ho...

ahle haram ko tumse hai dhaaras mere dilayr
pehra do phir qayaam ka utho ay mere sher
kyun jaa rahe ho tum mujhe ghurbat may chod ke
ay jaun bhai ho...

karna dua hussain pe aisa na waqt aaye
koi sada de humko aur hum se chala na jaye
laasha tumhara dasht se hum khud uthayenge
ay jaun bhai ho...

aahista kehna saaqi e kausar se mera haal
rakhti thi meri pyaas ka amma bohat khayaal
ghurbat na ho bayan meri amma ke saamne
ay jaun bhai ho...

aaye hai zakhm tumko meri jaan kahan kahan
in zaalimo ne maari hai seene pe barchiyan
shabbir kis tarha se tumhare galay lagay
ay jaun bhai ho...

tu ne gala kataya hai pehle hussain se
dilwayengi jaza wo shahe mashraqain se
chaadar utha ke deti hai amma dua tujhe
ay jaun bhai ho...

seene laga ke kehne laga ibne fatema
khushboo se teri mehkegi ta hashr karbala
boo hai tere paseene may kisne kaha tujhe
ay jaun bhai ho...

jaldi thi dekho jaun ko sajjad kis khadar
dhaal aur zira ko phaynk ke seena kiya sipar
jis dam suna hussain alaihis salaam se
ay jaun bhai ho...

اے جون بھای ہو تم میرے
عباس کی قسم تمہیں لگ جاؤ نہ گلے

بابا بھی آے ہیں میرے نانا بھی آے ہیں
چہرے کا نور دیکھنے موسیٰ بھی آے ہیں
یوسف کھڑے ہوے ہیں زیارت کے واسطے
اے جون بھای ہو۔۔۔

تجھکو دعایں آج سے دیگی دعائے نور
خوشبو تیرے پسینے کی پھیلے گی دور دور
مل جاے گا لہو تیرا خون حسین سے
اے جون بھای ہو۔۔۔

اہلِ حرم کو تم سے ہے ڈھارس میرے دلیر
پہرا دو پھر قیام کا اٹھو اے میرے شیر
کیوں جا رہے ہو تم مجھے غربت میں چھوڑ کے
اے جون بھای ہو۔۔۔

کرنا دعا حسین پہ ایسا نہ وقت آے
کوئی صدا دے ہم کو اور ہم سے چلا نہ جاے
لاشہ تمہارا دشت سے ہم قد اٹھاےنگے
اے جون بھای ہو۔۔۔

آہستہ کہنا ساقیِ کوثر سے میرا حال
رکھتی تھی میری پیاس کا اماں بہت خیال
غربت نہ ہو بیان میری اماں کے سامنے
اے جون بھای ہو۔۔۔

آے ہیں زخم تم کو میری جان کہاں کہاں
ان ظالموں نے ماری ہے سینے پہ برچیاں
شبیر کس طرح سے تمہارے گلے لگے
اے جون بھای ہو۔۔۔

تو نے گلا کٹایا ہے پہلے حسین سے
دلواےنگی جزا وہ شہ مشرقین سے
چادر اٹھا کے دیتی ہے اماں دعا تجھے
اے جون بھای ہو۔۔۔

سینے لگا کے کہنے لگا ابنِ فاطمہ
خوشبو سے تیری مہکے گی تا حشر کربلا
بو ہے تیرے پسینے میں کس نے کہا تجھے
اے جون بھای ہو۔۔۔

جلدی تھی دیکھو جون کو سجاد کس قدر
ڈھال اور زرع کو پھینک کے سینہ کیا سپر
جس دم سنا حسین علیہ السلام سے
اے جون بھای ہو۔۔۔