NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ali akbar ki azan

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


subhe ashura hui maa ne ro ro ke suni
ali akbar ki azaan

aakhri fajr hai ye is moazan ke liye
phir ye awaaz kahan
subhe ashura hui...

dasht may pyase moazan ne jo takbeer kahi
aagayi apne musalle pe ali ki beti
yaad phir aayi usay apne baba ki azan
ro padi aun ki maa
subhe ashura hui...

abhi kuch dayr salamat hai haram ka parda
shaam ke waqt jab aayegi azano ki sada
jaan bachane ke liye sar chupane ke liye
chadarein hongi kahan
subhe ashura hui...

ro ke bete ne kaha baap se hasrat hai meri
aap ki behan to sunlengi sada akbar ki
in hawaon se kahe rukh madine ka kare
meri sughra hai wahan
subhe ashura hui...

naam aaya jo mohamed ka to roye maula
inna lillah padha aur ye ghazi se kaha
is ko marenge sina ye musalman bhala
rehm khayenge kahan
subhe ashura hui...

aaya jab naam e ali uth ke ye maula ne kaha
mai fida aap pe baba meri aulaad fida
teer asghar ke lagay seena akbar ka chiday
mujhpe khanjar ho rawan
subhe ashura hui...

itna tadpega hussain ibne ali ay beta
teri maa teri phuphi teri sakina sughra
jee na payenge sabhi tujhko barchi jo lagi
tujh may hum sab ki hai jaan
subhe ashura hui...

masjid e kufa nazar aane lagi karbobala
do azaano pe bohat royi hai binte zehra
aaj tak bhooli nahi ek baba ki azaan
ek akbar ki azaan
subhe ashura hui...

kis khadar dard may doobi thi sada akbar ki
gash se uth kar kaha sajjad ne batlaye phuphi
sab kyun rote hai yahan shor hai kaisa bapa
kaun deta hai azaan
subhe ashura hui...

kaise manzar ho bhala mir takallum wo raqam
baabe sa'at pe hui satra azaane jis dam
sun ke ek ek azaan ro ke kehti thi wo maa
mere akbar ho kahan
subhe ashura hui...

صبحِ عاشور ہوی ماں نے رو رو کے سنی
علی اکبر کی اذاں

آخری فجر ہے یہ اس مؤذن کے لئے
پھر یہ آواز کہاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

دشت میں پیاسے مؤذن نے جو تکبیر کہیں
آگیء اپنے مصلے پہ علی کی بیٹی
یاد پھر آی اسے اپنے بابا کی اذاں
رو پڑی عون کی ماں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

ابھی کچھ دیر سلامت ہے حرم کا پردہ
شام کے وقت جب آے گی اذانوں کی صدا
جاں بچانے کے لئے سر چھپانے کے لئے
چادریں ہونگی کہاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

روکے بیٹے نے کہا باپ سے حسرت ہے میری
آپ کی بہن تو سن لیں گی صدا اکبر کی
ان ہواؤں سے کہے رخ مدینے کا کرے
میری صغرا ہے وہاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

نام آیا جو محمد کا تو روے مولا
انا للہ پڑھا اور یہ غازی سے کہا
اس کو مریں گے سناں یہ مسلمان بھلا
رحم کھاے نگے کہاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

آیا جب نام علی اٹھ کے یہ مولا نے کہا
میں فدا آپ پہ بابا میری اولاد فدا
تیر اصغر کے لگے سینہ اکبر کا چھدے
مجھ پہ خنجر ہو رواں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

اتنا تڑپے گا حسین ابنِ علی اے بیٹا
تیری ماں تیری پھپھی تیری سکینہ صغرا
جی نہ پائے نگے سبھی تجھکو برچھی جو لگی
تجھ میں ہم سب کی ہےجاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

مسجد کوفہ نظر آنے لگی کربوبلا
دو اذانوں پہ بہت روی ہے بنت زہرا
آج تک بھولی نہیں ایک بابا کی اذاں
ایک اکبر کی اذاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

کس قدر درد میں ڈوبی تھی صدا اکبر کی
غش سے اٹھ کر کہا سجاد نے بتلاے پھپھی
سب کیوں روتے ہیں یہاں شور ہے کیسا بپا
کون دیتا ہے اذاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔

کیسے منظر ہو بھلا میر تکلم وہ رقم
باب ساعت پہ ہوی سترہ اذانیں جس دم
سن کے اک ایک اذان روکے کہتی تھی وہ ماں
میرے اکبر ہو کہاں
صبحِ عاشور ہوی۔۔۔