NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Al amaan al amaan

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Hasnain Akbar


al amaan al amaan ya sahibaz zaban
tooti hui hai aaj bhi zahra ki phasliyan

haq maangne jo fatema darbar may gayi
baithe rahe thay log kisi ne haya na ki
zainab ki maa khadi rahi logon ke darmiyan
al amaan al amaan...

wa ghurbata batool pe kaisi thi wo ghadi
tumko sadayein deti thi beti rasool ki
dewaar aur jalte huwe dar ke darmiyan
al amaan al amaan...

dhaati rahi sitam pe sitam ummate rasool
deti rahi azan e wilayat wahan batool
zahra ki baat sunta nahi tha koi jahan
al amaan al amaan...

darbar se jo laut ke binte nabi gayi
guzre na us maqaam se maula hassan kabhi
jis kooche may giri thi zameen par hassan ki maa
al amaan al amaan...

abaad hoga phir se wo ujda hua dayaar
tab hoga khatm fatema sughra ka intezar
akbar ki tarha doge madine may jab azan
al amaan al amaan...

tanhaai qaid durre yateemi andhera ghar
hadh hai ye koi jaa bhi nahi sakta qabr par
ab aur kitna hoga sakina ka imtehan
al amaan al amaan...

kadiyal jawan ko roti hai turbat may aaj bhi
akbar ke to kaleje se barchi nikal gayi
zainab ke dil se nikli nahi aaj tak sina
al amaan al amaan...

bali sakina qaid hai zindan may aaj bhi
akbar hai intezar may beti hussain ki
ab bhi sunayi deti hai bachi ki hickiyan
al amaan al amaan...

الاماں الاماں یا صاحب الزمان
ٹوٹی ہوی ہے آج بھی زہرا کی پسلیاں

حق مانگنے جو فاطمہ دربار میں گیء
بیٹھے رہے تھے لوگ کسی نے حیا نہ کی
زینب کی ماں کھڑی رہی لوگوں کے درمیاں
الاماں الاماں۔۔۔

وا غربتا بتول پہ کیسی تھی وہ گھڑی
تم کو صدایں دیتی تھی بیٹی رسول کی
دیوار اور جلتے ہوے در کے درمیاں
الاماں الاماں۔۔۔

ڈھاتی رہی ستم پہ ستم امت رسول
دیتی رہی اذان ولایت وہاں بتول
زہرا کی بات سنتا نہیں تھا کوئی جہاں
الاماں الاماں۔۔۔

دربار سے جو لوٹ کے بنت نبی گیء
گزرے نہ اس مقام سے مولا حسن کبھی
جس کوچے میں گری تھی زمیں پر حسن کی ماں
الاماں الاماں۔۔۔

آباد ہوگا پھر سے وہ اجڑا ہوا دیار
تب ہوگا ختم فاطمہ صغریٰ کا انتظار
اکبر کی طرح دوگے مدینے میں جب اذاں
الاماں الاماں۔۔۔

تنہائی قید درے یتیمی اندھیرا گھر
حد ہے یہ کوئی جا بھی نہیں سکتا قبر پر
اب اور کتنا ہوگا سکینہ کا امتحان
الاماں الاماں۔۔۔

کڑیل جواں کو روتی ہے تربت میں آج بھی
اکبر کے کلیجے سے برچھی نکل گئ
زینب کے دل سے نکلی نہیں آج تک سناں
الاماں الاماں۔۔۔

بالی سکینہ قید ہے زنداں میں آج بھی
اکبر ہے انتظار میں بیٹی حسین کی
اب بھی سنای دیتی ہے بچی کی ہچکیاں
الاماں الاماں۔۔۔