NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akbar ke janaze pe

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


jis waqt gira zeen se humshakle payambar
shabbir ko zainab ne sada di ye tadap kar
akbar ke janaze pe mujhe le chalo bhaiya

hum milke utha lenge jawan laal ka laasha
akbar ke janaze pe mujhe le chalo bhaiya

athara baras waale ka sar godh may lekar
mai nade ali padhti rahungi ay baradar
tum seena e akbar se nikaloge jo naiza
akbar ke janaze pe...

jo zakhm lage hai wo dikhayega na tumko
shayad wo takalluf may batayega na tumko
mai maa hoo magar mujhse chupa hi nahi sakta
akbar ke janaze pe...

mai jaanti hoo kaise jawan hote hai bete
aur dekhne pad jaye agar unke janaze
ab mai bhi samajh sakti hoo aulaad ka sadma
akbar ke janaze pe...

aane nahi doongi mai kisi ko bhi wahan par
jee bhar ke galay milna jawan laal se jaa kar
mai maut se keh doongi zara dayr teher jaa
akbar ke janaze pe...

baba mere baba ki sada de to raha hai
awaaz se lagta hai bahot door gira hai
lo haath mera thaamo bahot door hai jaana
akbar ke janaze pe...

us karb ki haalat se nikaalega tumhe kaun
wo aediyan ragdega sambhalega tumhe kaun
chadar se banalungi mai kuch dayr ko parda
akbar ke janaze pe...

tooti hai kamar aap ki ay mere baradar
gir gir ke uthenge to hasenge ye sitamgar
mai aap ko ban'ne to nahi doongi tamasha
akbar ke janaze pe...

roti hai koi bibi musalsal pase parda
jabse hai suna mir takallum tera nauha
bhai se galay milke behan boli dubara
akbar ke janaze pe...

جس وقت گرا زین سے ہم شکل پیمبر
شبیر کو زینب نے صدا دی یہ تڑپ کر
اکبر کے جنازے پہ مجھے لے چلو بھیا

ہم مل کے اٹھا لیں گے جواں لال کا لاشہ
اکبر کے جنازے پہ مجھے لے چلو بھیا

اٹھارہ برس والے کا سر گود میں لے کر
میں ناد علی پڑھتی رہوں گی اے برادر
تم سینۂ اکبر سے نکالو گے جو نیزہ
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

جو زخم لگے ہیں وہ دکھاے گا نہ تم کو
شاید وہ تکلف میں بتاے گا نہ تم کو
میں ماں ہوں مگر مجھ سے چھپا ہی نہیں سکتا
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

میں جانتی ہوں کیسے جواں ہوتے ہیں بیٹے
اور دیکھنے پڑ جایئں اگر ان کے جنازے
اب میں بھی سمجھ سکتی ہوں اولاد کا صدمہ
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

آنے نہیں دوں گی میں کسی کو بھی وہاں پر
جی بھر کے گلے ملنا جواں لال سے جا کر
میں موت سے کہہ دوں گی زرا دیر ٹہر جا
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

بابا میرے بابا کی صدا دے تو رہا ہے
آواز سے لگتا ہے بہت دور گرا ہے
لو ہاتھ میرا تھامو بہت دور ہے جانا
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

اس کرب کی حالت سے نکالے گا تمہیں کون
وہ ایڑیاں رگڑے گا سنبھالے گا تمہیں کون
چادر سے بنالوں گی میں کچھ دیر کو پردہ
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

ٹوٹی ہے کمر آپ کی اے میرے برادر
گر گر کے اٹھیں گے تو ہسینگے یہ ستمگر
میں آپ کو بننے تو نہیں دونگی تماشا
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔

روتی ہے کوئی بی بی مسلسل پس پردہ
جب سے ہے سنا میر تکلم تیرا نوحہ
بھای سے گلے مل کے بہن بولی دوبارہ
اکبر کے جنازے پہ۔۔۔